صحافی محسن بیگ کے گھر ایف آئی اے چھاپے، تشدد کی از سر نو انکوائری کا حکم 

  صحافی محسن بیگ کے گھر ایف آئی اے چھاپے، تشدد کی از سر نو انکوائری کا حکم 

  

اسلام آباد(آن لائن) اسلام  آباد ہائیکورٹ نے صحافی محسن بیگ کے گھر ایف آئی اے کے چھاپے اور تھانے میں تشدد کی از سر نو  انکوائری کا حکم  دیا ہے۔اسلام آباد ہائی کورٹ کے  جسٹس اطہر من اللہ نے ایڈیشنل سیشن جج ظفر اقبال کی طرف سے سینئر صحافی محسن جمیل بیگ کو پولیس تحویل میں ایف آئی اے اہلکاروں کی طرف سے تشدد کا نشانہ بنانے کے عمل پر مقدمہ کے اندراج کے گزشتہ کے جاری احکامات کے خلاف ایف ائی اے کی دائر درخواست کی سماعت کے موقع پر ریمارکس دئیے  کہ ڈی سی کی رپورٹ سے واضح ہو چکا کہ ایس ایچ او نے اس معاملے میں سنگین غلطیاں کیں اور اختیارات سے تجاوز کیا۔ ایس ایچ او تھانہ مارگلہ نے ایف آئی ے اہلکاروں کو تھانے میں گھسنے کی اجازت دی اور پولیس تحویل میں لئے گئے سینئر صحافی محسن جمیل بیگ کو ایف آئی اے اہلکاروں سے تشدد کا نشانہ بنوایا۔چیف جسٹس نے ایس ایچ او تھانہ مارگلہ سب انسپکٹر خرم شہزاد کو مخاطب کرتے ہوئے پوچھا کہ آپ نے کس اختیار کے تحت ایف ائی اے اہلکاروں کو تھانے میں گھسنے دیا۔کیا آپ ایف ای اے کے سہولت کار ہیں۔ آپ کی تحویل میں گرفتار شخص کی ایف ائی اے کیسے تشدد کا نشانہ بنا سکتی ہے۔ آپ لوگوں کا سینئر صحافی کے ساتھ یہ رویہ ہے تو عام شہری کے ساتھ تھانے میں کیا سلوک کرتے ہوں گے، عام شہری تو اس عدالت تک رسائی بھی نہیں رکھتا۔کیا ایسے شخص کو پھر بھی ایس ایچ او رہنا چاہئیے؟ہم شہری آزادی کے قانون کا کیا کریں، کیا یہ قانون صرف کتابوں تک ہے؟معاملہ کی سماعت عدالت عالیہ کے چیف جسٹس جسٹس اطہر من اللہ کی عدالت نے کی۔ دوران سماعت ایف آئی اے پراسیکیوٹر نے موقف اپنایا کہ معاملے میں ایف آئی اے نے اپنے موجود اختیارات کے تحت کاروائی کی۔ عدالت عالیہ ایڈیشنل سیشن جج کے حکم نامے میں سے ایف آئی ے اہلکاروں پر مقدمے کے اندراج کا حصہ حذف کرنے کا حکم دے۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے اس موقع پر ریمارکس دئیے کہ اگر کسی شہری سے کوئی غلطی ہوئی ہے تو بھی قانون نافذ کرنے والے اداروں کو حدود سے تجاوز کا اختیار نہیں۔سوال یہ ہے کو پولیس کے اختیارات سے تجاوز جو کیسے روکا جائے۔عدالت عالیہٰ نے اس موقع پر ڈپٹی کمشنر اسلام آباد کو معاملے کی از سر نو انکوائری کا حکم دیتے ہوئے قرار دیا کہ بتایا جائے کہ سینئر صحافی محسن جمیل بیگ پر تھانے میں تشدد کرنے والے ایف ائی اے کے کون کون سے اہلکار تھے۔ بعد ازاں معاملے کی سماعت یکم جولائی تک کے لئے ملتوی کر دی گئی ہے۔ 

محسن بیگ کیس

مزید :

صفحہ اول -