کوہاٹ، پانی اور صفائی کی ناگفتہ بہہ صورتحال، پرائیویٹ کمپنی کی عیاشیاں بے مثال 

کوہاٹ، پانی اور صفائی کی ناگفتہ بہہ صورتحال، پرائیویٹ کمپنی کی عیاشیاں بے ...

  

        کوھاٹ (بیورو رپورٹ) سٹی میئر کوھاٹ پانی اور صفائی کے لیے کام کرنے والی پرائیویٹ کمپنی کی عیائشیوں کا نوٹس لے‘ غیر ضروری افسران کی بھرتیوں کے بجائے پانی اور صفائی کی حالت بہتر بنانے پر توجہ دی جائے گزشتہ 6 سالوں میں پانی کی فراہمی کا مسئلہ حل نہ کرنا اور نالائق افسروں کے کن ٹریکٹ کو مزید طورل دینا کوھاٹ کی عوام اور قومی خزانے کے ساتھ زیادتی ہے شہریوں کے مطابق کمپنی نے کئی سالوں سے ایسے بھی افسران بھرتی کر رکھے ہیں جن کو شہر کے مختلف علاقوں کا علم نہیں شہریوں کے مطابق ہمیں صفائی کے ادارے میں میک اپ زدہ خواتین کی نہیں بلکہ گلی محلوں میں کام کرنے والے محنتی لوگوں کی ضرورت ہے بعض منتخب نمائندوں کے مطابق عوام کو سہولیات کی فراہمی کے لیے آنے والے فنڈز کا بڑا حصہ امپورٹڈ افسران کی عیاشیوں پر خرچ ہوتا ہے ایک آدھ اعلیٰ افسر کو چھوڑ کر کئی ایسے بھاری بھر کم تنخواہیں‘ گاڑیاں‘ پٹرول اور گھروں میں کام کرنے والے ملازمین کی مراعات انجوائے کر رہے ہیں جن کو شائد کوئی بغیر سفارش کے 30 ہزار پر بھی ملازم نہ رکھے مگر شہر نا پرسان کوھاٹ ایسے لوگوں کے لیے یورپ بنا ہوا ہے شہریوں نے سٹی میئر کوھاٹ اور اسسٹنٹ ڈائریکٹر اینٹی کرپشن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ڈبلیو ایس ایس سی کے مالی معاملات اور ان میں ہونے والے مبینہ بے ضابطگیوں کو اور مفت تنخواہیں لینے والوں کی نشاندہی کرتے ہوئے ان کے خلاف نہ صرف سخت کارروائی کریں بلکہ ان سے ریکوری بھی کی جائے تاکہ ادارے کی ساکھ بہتر ہو سکے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -