سپہ سالار آپ کی حکومت کے ساتھ کھڑے تھے تو عظیم تھے ، آج آئین کیساتھ کھڑے ہیں تو میر جعفر ، میر صادق ہو گئے ، مریم نواز

سپہ سالار آپ کی حکومت کے ساتھ کھڑے تھے تو عظیم تھے ، آج آئین کیساتھ کھڑے ہیں ...
سپہ سالار آپ کی حکومت کے ساتھ کھڑے تھے تو عظیم تھے ، آج آئین کیساتھ کھڑے ہیں تو میر جعفر ، میر صادق ہو گئے ، مریم نواز

  

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے کہا کہ عمران خان کا ذہنی توازن درست نہیں ، وہ پاگل پن کی آخری سٹیج پر ہیں ، ان کیلئے میڈیکل بورڈ تشکیل دیا جائے ، ایسے شخص کا سر عام پاکستان  میں گھومنا خطرے سے خالی نہیں ، سپہ سالار  جب تک  آپ کی حکومت کے ساتھ کھڑے تھے تو عظیم تھے ، آج آئین کیساتھ کھڑے ہیں تو میر جعفر ، میر صادق ہو  گئے ۔

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ میں نے اقتدار کی خاطر کسی شخص کو اتنا مایوس نہیں دیکھا جتنا عمران خان کو دیکھ رہی ہوں ، اقتدار چلنے جانے پر وہ ہوش و حواس کھو چکے ہیں ،  یہ اس اقتدار کیلئے دل گرفتا ہیں جو ان کا کبھی تھا ہی نہیں ،  انہوں نے غیر آئینی ، غیر قانونی  اور غیر سیاسی طریقے سے عوام کا مینڈیٹ چھینا تھا جو ان سے عوام نے  واپس لے لیا۔

مریم نواز نے کہا کہ  کل عمران  خان کابیان سناجس پرپوری قوم میں غم وغصہ ہے، عمران خان نےکہاملک 3 ٹکڑوں میں بٹ جائےگا، یہ 3 ٹکڑوں والانظریہ کس نےآپ کودیا؟کبھی آپ کہتےہیں کشمیرکے 3 حصےہونےچاہئیں، عمران خان کس کےایجنڈےپرگامزن ہیں؟ بینظیربھٹوشہیدہوئیں لیکن ان کی جماعت سےآوازآئی پاکستان کھپے، لیڈرعوام کوجوڑتےہیں توڑتےنہیں۔

نائب صدر مسلم لیگ (ن) نے کہا کہ یہ پہلا شخص ہے جو اقتدار کے پہلے  30 دنوں میں ناکام ہو گیا پھر جب اقتدار سے نکلا تو ابتدائی  30 دنوں میں بے نقاب بھی ہو گیا ، اب اپنی ناکامی کا بدلہ  ریاست پاکستان سے لینے پر تلا بیٹھا ہے ،  خود کو انقلابی اور جہادی لیڈر کہنے والا اب ضمانتی لیڈر بن چکاہے ۔ پاکستان کے ایٹمی پروگرام کو رول بیک کرنے کی باتیں کر رہاہے ، پاکستان کے ایٹمی پروگرام کیلئے سیاستدانوں نے بے انتہا قربانیاں دیں ، سیاست دان پھانسی چڑھے ، عمر قید بھگتی اور جلا وطنی دی ، عمران خان کو تو ابھی ہاتھ نہیں لگے ، ان کو تو کسی نے کچھ کہا ہی نہیں ۔ 

 مریم نواز کا کہنا تھا کہ   عمران خان نے اقتدار میں رہتے ہوئے بھی  ایٹمی پروگرام کو رول بیک کرنے کی بات کی ، انہوں نے   2020 میں بھی ایک غیر ملکی  اینکر کو کہا تھاکہ   میں سمجھتا ہوں پاکستان کو ایٹمی پروگرام کی ضرورت نہیں ۔ مریم نواز نے کہا کہ   ایٹمی پروگرام کا  خواب ذوالفقار علی بھٹو نے دیکھا جبکہ نواز شریف نے دھماکے کر کے پاکستان کے دفاع کو ناقابل تسخیر بنایا ،  اس پروگرام کیلئے ذوالفقار علی بھٹو ، نواز شریف  ، سائنسدانوں اور افواج پاکستان نے بے پناہ قربانیاں دیں ۔ 

مریم نواز نے مزید کہا کہ آپ کہتے ہیں فوج درست فیصلے کریں ورنہ تباہ ہو جائے گی ، ہم نے بھی افواج پر تنقید کی مگر مثبت کی ،   ان پر انگلیاں نہ اٹھیں،  اپنی ذات کو مشکلوں میں ڈال کر  ان کی سمت درست کی ، آپ کی نظر میں درست فیصلے کرنا کیا ہے ، آر ٹی ایس سسٹم بٹھانا  درست ہے ، اپنے علاوہ سارے پاکستان کو جیل میں ڈال دینا درست  فیصلہ ہے َ؟، پاکستان کو پوری دنیا کے ممالک سے لڑا دینا صحیح فیصلہ ہے ، انتخابات میں دھاندلی کیلئے اداروں پر خطرناک حملوں پر چپ سادھ لینا درست فیصلہ ہے ۔

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر نے کہا کہ رات 12 بجے آپ کی آئین شکنی پر عدالتیں کھلیں تو آپ رونے لگے ، لیکن آج آپ عدالتوں کو اپنی سیاست کیلئے استعمال کرنا چاہتی ہیں کہ میرا لانگ مارچ نہیں ہورہا ، میرا لانگ مارچ کراؤ ؟۔ 

 مریم نواز کا کہنا تھا کہ کوئی ایک شخص بتا دیں جس سے عمران خان نے وفا کی ہو  اور  دھوکہ نہ دیا ہو ،خواہ وہ   والدین ہون  ، بیویاں  ، بچے یا محسن ہوں  ،  انہوں نے اپنے کارکنوں کو بھی دھوکہ دیا ، وہ انتظار کرتے رہے اور یہ بنی گالہ چلے گئے ، 35 پنکچرز ، ایک کروڑ نوکریاں ، پچاس لاکھ گھر اور تبدیلی کی باتیں کی گئیں ۔  گزشتہ روز جسٹس یحیٰ آفریدی کا اختلافی نوٹ آپ کے خلاف چارج شیٹ ہے ، اس نے آپ کا کچا چٹھا کھول دیا ہے ، آپ نے   عدالت عظمیٰ کے حکم کے باوجود کارکنوں کو  ڈی چوک پہنچنے کی ہدایت کی ۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -