قومی شاہینوں او بھارتی سورماﺅں میں آج جوڑ پڑیگا

قومی شاہینوں او بھارتی سورماﺅں میں آج جوڑ پڑیگا

 پاکستان اور بھارت کی کرکٹ ٹیمیں آج میدان میں اتر رہی ہیں اس میچ پر پوری دنیا کے شائقین کرکٹ کی نظریں جمی ہوئی ہیں پاکستان کرکٹ ٹیم کے لئے اس میچ کی اہمیت اس لحاظ سے بہت زیادہ ہے کہ اس کا مقابلہ رروائتی حریف بھارت سے ہے اور ہمیشہ جب بھی دونوں ٹیمیں آمنے سامنے ہوتی ہیں تو اس وقت چاہے ایونٹ میں دونوں ٹیموں کی جو بھی پوزیشن ہو لیکن اس میچ کی اہمیت بڑھ جاتی ہے اس میچ میں پاکستان کرکٹ ٹیم کی کپتانی کے فرائض مصبا ح الحق انجام دے رہے ہیں جبکہ بھارتی کرکٹ ٹیم کی کمان نوجوان کرکٹر کوہلی کے ہاتھوں میں ہے تجربہ کے لحاظ سے مصبا ح الحق آگے ہیں لیکن جب میدان میں ٹیمیں اترتے ہیں تو تجربہ سے زیادہ حوصلہ زیادہ دیکھا جاتا ہے اور اس کی بدولت کوئی کمزور ٹیم بھی مضبوط ٹیم کو شکست دے سکتی ہے پاکستان اور بھارت کی کرکٹ ٹیموں کے درمیان اب تک کئی میچ کھیلے جاچکے ہیں اور ایشیاءکپ کی بات کی جائے تو اس ایونٹ میں بھارتی کرکٹ ٹیم کی پاکستان کے خلاف مجموعی طور پر اچھی کارکردگی رہی ہے لیکن اس مرتبہ پاکستان کرکٹ ٹیم کی کارکردگی اور حوصلہ مندی دیکھ کر کہا جاسکتا ہے کہ پاکستانی ٹیم اس ایونٹ میں بھارت کوشکست دینے میں کامیاب ہوجائے گی لیکن اس کےلئے ضروری ہے کہ بہترین حکمت عملی تیار کی جائے اور ٹیم اس حکمت عملی کے تحت میدان میں اترے جوش کے بجائے ہوش سے کام لیا جائے بھارتی کرکٹ ٹیم کے خلاف جب بھی پاکستان کرکٹ ٹیم کا میچ ہوتا ہے تو دونوں ٹیموں کے کھلاڑیوں پر بہت زیادہ پریشر ہوتا ہے اور اس پریشر کی وجہ سے کھلاڑیوں کو نقصان اٹھانا پڑتا ہے جو کھلاڑی اس پریشر کوبرداشت کرلیتے ہیں وہ عمدہ کھیل کا مظاہر ہ کرتے ہیں اور جو پریشر میں کمزور پڑجاتے ہیں وہ ناکام ہوجاتے ہیں اس لئے یہ اعصابی جنگ ہے جو کمزور پڑگیا وہ ہار گیا اور جو مضبوط رہا وہ جیت گیا پاکستان کرکٹ ٹیم کی طرح بھارتی کرکٹ ٹیم میں بھی شامل کھلاڑیوں کی تعداد نوجوان کرکٹرز پر مشتمل ہے اور نوجوان کھلاڑیوں کے پاس قسمت آزمائی کا بہترین موقع بھی ہے ہر کھلاڑی کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ بھارت کے خلاف میچ میں حصہ لے اس وقت قومی کرکٹ ٹیم میں شامل کئی کھلاڑی پہلی مرتبہ بھارت کے خلاف میچ میں شرکت کررہے ہیں بہرحال دونوں ٹیموں کے درمیان کانٹے دار مقابلے کی امید ہے کہ پوری قوم کی دعا اس وقت یہ ہے کہ ٹیم آج کا میچ اپنے نام کرے اور بھارت کو ایک طویل عرصہ کے بعد شکست دے جو ایک خواب بن کر رہ گیا ہے اور اگر پاکستان کرکٹ ٹیم آج کا میچ جیت جاتی ہے تو قومی کرکٹ کو جو پزیرائی ملے گی وہ ناقابل یقین ہے اور اس طر ح ٹیم کو اس ایونٹ میں بھی بہت فائدہ حاصل ہوگا۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی