1122نے گزشتہ ماہ پنجاب میں 43766 متاثرین کومددفراہم کی

1122نے گزشتہ ماہ پنجاب میں 43766 متاثرین کومددفراہم کی

لا ہو ر (کرا ئم سےل )ڈی جی ریسکیو پنجاب ڈاکٹر رضوان نصیرنے گزشتہ روز ریسکیو 1122ہیڈکوارٹرز میں ایمرجنسی افسران کی میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے پنجاب کے تمام اضلاع میںفروری میں ریسکیو 1122کی کارکردگی کا جائزہ لیاجسکا مقصد سروس کی کارکردگی کو مزید بہتر بنانا ہے۔ایمرجنسی سروس کے اعدادو شمار کے مطابق ریسکیو1122نے گزشتہ ماہ پنجاب بھر میں41240ریسکیوآپریشن کے دوران اوسط ریسپانس ٹائم7منٹ برقرار رکھتے ہوئے 43766ایمرجنسی متاثرین کو ریسکیوکیا۔ایمرجنسیزسے متعلقہ اعدادوشمارکا موازنہ کیا جائے تو ان میںریسکیو 1122نے کل14285کال ٹریفک حادثات،20904 میڈیکل ایمرجنسی، 639آگ لگنے کے واقعات ،39 عمارتیں منہدم ہونے کے واقعات،1564جرائم کی کال،42ڈوبنے کے واقعات ،3756 دےگر ریسکیو آپریشن اور11سلنڈر کے پھٹنے کے واقعات پر ریسپانڈ کیا ۔ پراونشل مانیٹرنگ سیل نے ڈی جی ریسکیوپنجاب کو بتایاکہ پنجاب میں روڈ ٹریفک کریشز کے تناسب میں اضافہ ہواہے جس پرانہوں نے تشویش کااظہارکرتے ہوئے کہاکہ بڑھتے ہوئے ٹریفک حادثات انسانی زندگیوں کےلئے خطرہ ہیںکیونکہ ان سے زیادہ ترخاندان کے واحدخود کفیل افراد لقمہ اجل بن رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اعدادوشمارسے اس بات کی وضاحت ہوتی ہے کہ ریسکیو1122روزانہ کی بنےاد پر 500سے زائد روڈ ٹریفک حادثات پر ریسپانڈ کررہی ہے جن میں اوسط 600خاندان متاثرہورہے ہیں۔اس موقع پر ڈی جی ریسکیو پنجاب نے تمام ڈسٹرکٹ ایمرجنسیز افسران کو ہدایات دی ہیں کہ وہ شہریوں کی تربیت کے لئے موثرپروگرام ترتیب دیں تاکہ کمیونٹی ممبرزاپنے علاقوں میں بڑی ایمرجنسیز میں ریسکیو رز کے شانہ بشانہ کام کرتے ہوئے نظرآئیں ۔ انہوں نے کہا کہ اگرچہ ریسکیو1122لوگوں کی مدد کے لیے ہر وقت موجود ہے لیکن شہریوں کو چاہیے کہ وہ غیرمحفوظ اور غیرقانونی عمارات میں رہ کریاغیرمحفوظ ڈرائیونگ سے اپنی زندگیاںخطرے میں مت ڈالیں ۔

مزید : علاقائی