ڈرگ ایکٹ ترمیم، فارماسسٹ موجودگی کی شرط پر فارمیسی، میڈیکل سٹور مالکان کو وختہ

ڈرگ ایکٹ ترمیم، فارماسسٹ موجودگی کی شرط پر فارمیسی، میڈیکل سٹور مالکان کو ...

ملتان( مہر احمد رضا سیال) ڈرگ ایکٹ میں ترمیم کے بعدقوانین کی خلاف ورزی کرنے والے فارمیسی اور میڈیکل سٹور مالکان کے خلاف کارروائی شروع کر دی گئی‘کوالیفائیڈ پرسن کی فارمیسی اور میڈیکل سٹور پر موجودگی لازمی قرار دینے کی شرط نے بے روز گار کوالیفائیڈ پرسن کے لئے روز گار کے مواقع کھول دئیے جنہوں نے اپنے ریٹ بڑھا دئیے ہیں‘ ڈرگ ایکٹ میں ترمیم کے بعد سزاؤں میں اضافے کے باعث میڈیکل سٹور مالکان کی نیندیں اڑ گئیں‘تفصیل کے مطابق ڈرگ ایکٹ کے خلاف فارمیسی و میڈیکل سٹور مالکان نے ہڑتال کر دی تھی‘ اس پر مریضوں اور ان کے لواحقین کو شدید مشکلات اور پریشانی کا سامنا کرنا پڑاجس کے بعد حکومت نے مذاکرات کے بعد ہڑتال ختم کر دی ‘ڈرگ ایکٹ میں ترمیم کے تحت ہر فارمیسی و میڈیکل سٹور پر فارما سسٹ کی موجودگی لازمی قرار دی گئی ہے ‘کوالیفائیڈ پرسن کے موجود نہ ہونے کی صورت میں فارمیسی و میڈیکل سٹور مالک کو 30دن سے 5سال تک قید اور 5لاکھ روپے سے 50لاکھ رو پے تک جرمانہ کیا جاسکتا ہے ‘ کیس ڈرگ کورٹ میں جائے گا اور عدالت سماعت کے بعد فیصلہ سنائے گی‘واضح رہے کہ ضلع ملتان میں 1200سے زائد فارمیسی و میڈیکل سٹور ہیں مگر ان میں سے ایک فارمیسی و میڈیکل سٹور پر بھی فارماسسٹ نہیں ہے بلکہ بیشتر میٹرک و مڈل فیل افراد بھی کام کر رہے ہیں اور اکثر ایسا ہوتا ہے کہ نسخے پر ڈاکٹر کی طرف سے کچھ لکھا ہوتا ہے اور نان کوالیفائیڈ و میٹرک و مڈل فیل مالکان و ملازم ادویہ کوئی اور دے دیتے ہیں جس کے باعث متعدد مریض جاں بحق ہو چکے ہیں ‘ کئی مریضوں کو حالت خراب ہونے کے باعث ہسپتال داخل کرانا پڑا‘ محکمہ صحت کے عملے کی ملی بھگت سے بیشتر میڈیکل سٹور مالکان لائسنس کرائے پر لے کر کام چلا رہے ہیں‘سب سٹینڈرڈ ادویہ فروخت کی جا رہی ہیں ‘ ممنوعہ جنسی ادویات بھی فروخت کی جا رہی ہیں ‘ڈرگ ایکٹ میں ترمیم کے تحت ہرفارمیسی و میڈیکل سٹور پر فارماسسٹ کی موجودگی لازمی قرار دئیے جانے پر فارمیسی و میڈیکل سٹور مالکان کو وختہ پڑ گیا ہے جس کے باعث جہاں بے روزگار کوالیفائیڈ افراد نے ریٹ بڑھا دئیے ہیں اور کم از کم ماہانہ تنخواہ 40سے 50ہزار روپے مانگ رہے ہیں ‘ اگر حکام فارمیسی و میڈیکل سٹور ز کا معائنہ کریں تو خوفناک بے ضابطگیاں سامنے آسکتی ہیں اور بڑے بڑوں کے ’’ پول ‘‘ کھل جائیں گے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر