محبت کی شادی کرنے والے جوڑے کوہراساں نہ کرنے کاحکم

محبت کی شادی کرنے والے جوڑے کوہراساں نہ کرنے کاحکم

لاہور(نامہ نگار )محبت کی شادی کرنے والی آرزو اور عدنان والدین کی طرف سے ہراساں کرنے پر سیشن کورٹ پہنچ گئے ،فاضل جج نے شفیق آباد پولیس کودرخواست گزار جوڑے کوہراساں نہ کرنے کاحکم دے دیا ہے ۔ایڈیشنل سیشن جج عدنان مشتاق کی عدالت میں بلال گنج امین پارک کی آرزو اور اس کے شوہرعدنان اپنے وکیل کی وساطت سے پیش ہوئے ،جہاں انہوں نے موقف اختیار کیا کہ دونوں نے محبت کی شادی کی ،شادی کے بعد لڑکی کے والدین اس کی جان کے در پے ہیں ،دونوں کو ہراساں کیا جا رہا ہے ،لڑکی کو مجبور کیا جا رہا ہے کہ وہ لڑکے کو چھوڑ کر گھر آ جائے لڑکی کے انکار پر اس کو ہراساں کیا جا رہا ہے ان کو قتل کی دھمکیاں دی جا رہی ہیں عدالت سے استدعا ہے کہ ان کو ہراساں کرنے سے پولیس کو روکا جائے ،عدالت میں لڑکی آرزو نے بتایا کہ اس نے شرعی طریقے سے شادی کی ہے اس کو کسی نے اغوا ء نہیں کیا ،وہ مرضی سے عدنان کے ساتھ رہ رہی ہے ،عدالت ہمیں تحفظ دلوائے ،عدالت نے درخواست گزار جوڑے کو ہراساں کرنے سے روک دیا ہے ۔

مزید : علاقائی