’میں نے اس 12سالہ افغان مہاجر کو اپنے گھر میں پناہ دی لیکن چند دن بعد ہی اس نے ایسا کام شروع کردیا کہ زندگی کا سب سے زوردار جھٹکا دے دیا، وہ تو دراصل۔۔۔‘ خاتون نے ایسی بات بیان کردی کہ سن کر آپ بھی کانپ اٹھیں گے

’میں نے اس 12سالہ افغان مہاجر کو اپنے گھر میں پناہ دی لیکن چند دن بعد ہی اس نے ...
’میں نے اس 12سالہ افغان مہاجر کو اپنے گھر میں پناہ دی لیکن چند دن بعد ہی اس نے ایسا کام شروع کردیا کہ زندگی کا سب سے زوردار جھٹکا دے دیا، وہ تو دراصل۔۔۔‘ خاتون نے ایسی بات بیان کردی کہ سن کر آپ بھی کانپ اٹھیں گے

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ میں ایک خاتون نے ترس کھاتے ہوئے 12سالہ افغانی پناہ گزین بچے کو اپنے گھر میں پناہ دے دی لیکن کچھ ہی دن بعد اس ’بچے‘ نے ایسی حرکت کر دی کہ اس کے پیروں تلے زمین نکل گئی اور وہ اب تک خوف کے عالم میں زندگی گزار رہی ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 2بچوں کی ماں جولی (فرضی نام)نے عبدل نامی اس افغانی کو پناہ گزینوں کے کیمپ میں دیکھا تو اسے اس بچے پر بہت ترس آیا۔ بچے نے اسے بتایا کہ اس کی عمر 12سال ہے۔ جولی اسے اپنے ساتھ اپنے گھر لے گئی۔ کچھ دن بعد عبدل کے دانت میں درد ہوا جس پر جولی اسے ڈاکٹر کے پاس لے کر گئی۔ ڈاکٹر نے علاج کے بعد اس کے دانتوں سے اس کی عمر کا اندازہ لگاتے ہوئے جولی کو بتایا کہ اس کی عمر 12سال قطعاً نہیں ہو سکتی۔ درحقیقت اس کی عمر 18سے 21سال کے درمیان ہے۔ اس انکشاف پر جولی نے پولیس کو شکایت کی جس پر عبدل نے اس پر حملہ کر دیا اور اسے خاندان سمیت قتل کرنے کی دھمکیاں دیں۔

دنیا کا سب سے خطرناک راستہ جہاں سے گزرنے والی ہر لڑکی کا ریپ کردیا جاتا ہے کیونکہ۔۔۔

جولی نے ایک ٹی وی انٹرویو میں بتایا ہے کہ ”شروع میں وہ بہت پرسکون اور عقلمند لگتا تھا۔ مجھے کبھی اس کی عمر پر شک تو ہوتا لیکن اس کی ہیئت بظاہر 12سال کے بچوں جیسی ہی تھی۔ میں اس کا موازنہ اپنے بیٹے کے ساتھ کرتی لیکن وہ اس کی باتیں میرے بیٹے سے کہیں پختہ ہوتیں حالانکہ ان کی عمر ایک جتنی تھی۔ پولیس نے جب اسے گرفتار کیا تو اس نے بتایا کہ وہ بیلجیئم میں بھی اسی وجہ سے گرفتار ہو چکا تھا۔ وہاں بھی اس نے کیمپ میں بتایا کہ اس کی عمر 12سال ہے لیکن جب اس کی اصل عمر معلوم ہوئی تو اسے گرفتار کر لیا گیا۔ رہائی کے بعد وہ برطانیہ آ گیا۔ اس کی دھمکیوں کے باعث میں اور میرے بچے آج بھی خوفزدہ رہتے ہیں۔اسے بعد ازاں رہا کر دیا گیا تھا اور میں جانتی ہوں کہ اس کی اچھی طرح نگرانی نہیں کی جا رہی۔ وہ کسی بھی وقت میرے گھر آ سکتا ہے اور مجھ پر یا میرے بچوں پر حملہ کر سکتا ہے۔ حکومت کو چاہیے کہ پناہ گزینوں کو ملک میں لانے اور دیکھ بھال کے لیے شہریوں کے حوالے کرنے سے قبل ان کی اصل عمرجانچنے کے لیے ضروری ٹیسٹ کر لیا کرے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس