صوبے میں معیشت کی بہتری کیلئے صنعتی زونز کی تکمیل پر کام جاری ہے:محمود خان

  صوبے میں معیشت کی بہتری کیلئے صنعتی زونز کی تکمیل پر کام جاری ہے:محمود خان

  



پشاور (سٹاف رپورٹر) وزیراعلی خیبرپختونخوا محمود خان نے کہا ہے کہ نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع میں ترقیاتی منصوبوں کی تیز تر تکمیل موجودہ صوبائی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہیں۔انہوں نے کہا ہے کہ قبائلی اضلاع میں نوجوانوں کو انصاف روزگار سکیم کے تحت بلا سود قرضے فراہم کر رہے ہیں تاکہ قبائلی اضلاع کے نوجوان اپنا روزگار شروع کر سکے۔وزیر اعلی نے کہا ہے کہ ڈی آئی خان ایکسپریس وے کی تکمیل سے نہ صرف جنوبی اضلاع میں تجارتی سرگرمیوں کو فروع ملے گا بلکہ نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع بھی اس منصوبے سے استفادہ کرسکیں گے۔ قبائلی اضلاع میں تمام صوبائی محکموں کی توسیع ہوچکی ہے جس سے وہاں کے عوام کو بنیادی خدمات اور سہولیات کی فراہمی میں آسانی ممکن ہو سکے گی۔ یہاں سے جاری ایک پیغام میں وزیراعلیٰ نے کہا ہے کہ صوبے بشمول نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع کی مجموعی ترقی کیلئے موجودہ صوبائی حکومت حکمت عملی کرچکی ہے اور بہت جلد صوبہ ترقی کی راہ پرگامزن ہو گا۔ اُنہوں نے کہا ہے کہ صوبے میں معیشت کی بہتری کیلئے صنعتی زونز کی تکمیل پر تیز تر کام جاری ہے۔ انڈسٹریل زونز کے قیام سے صوبے میں تجارتی سرگرمیاں مزید بڑھیں گی۔ صوبہ خیبرپختونخوا تجارتی سرگرمیوں کا مرکز بننے جارہا ہے اُنہوں نے مزید کہا کہ صنعتکاروں کو سازگار ماحول فراہم کرنے کیلئے موجودہ صوبائی حکومت اقدامات کر رہی ہے جس کے تحت مقامی صنعتوں کو ویلینگ کے ذریعے سستی بجلی کی فراہمی یقینی بنارہے ہیں۔ وزیراعلیٰ کا کہنا تھا کہ نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع میں سیاحت کے فروغ کیلئے موجودہ صوبائی حکومت اقدامات کر رہی ہے جس سے قبائلی اضلاع میں بھی سیاحت بطور صنعت اُبھر کر آئے گی۔ صوبائی حکومت کی اس اقدام سے نہ صرف ضم شدہ قبائلی اضلاع کی ترقی ممکن ہو سکے بلکہ وہاں پر مقامی افراد کو روزگار کے مواقع بھی میسر آئیں گے۔ وزیراعلیٰ نے کہا ہے کہ نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع میں دیگر ترقیاتی کاموں کے ساتھ ساتھ تمام انفراسٹرکچر کی بہتری ممکن بنائی جائے گی جس سے قبائلی اضلاع کے عوام کی محرومیوں کا ازالہ یقینی بنایا جائے گا۔ اُنہوں نے کہاکہ نئے ضم شدہ قبائلی اضلاع میں عوامی منتخب نمائندوں کے ذریعے ترقیاتی کاموں کی تکمیل، وہاں پر صحت، تعلیم و دیگر بنیادی خدمات و سہولیات کی فراہمی ترجیحی بنیادوں پر ممکن بنائی جائے گی۔

مزید : صفحہ اول