جاپانی سائنسدانوں نے کیڑوں کے ذریعے انسانوں میں کینسر کی تشخیص شروع کردی

جاپانی سائنسدانوں نے کیڑوں کے ذریعے انسانوں میں کینسر کی تشخیص شروع کردی
جاپانی سائنسدانوں نے کیڑوں کے ذریعے انسانوں میں کینسر کی تشخیص شروع کردی

  



ٹوکیو(مانیٹرنگ ڈیسک) جاپان میں سائنسدانوں نے کینسر کی تشخیص کا ایک ایسا سستا اور آسان طریقہ ڈھونڈ نکالا ہے کہ سن کر یقین کرنا مشکل ہو جائے۔ ڈیلی سٹار کے مطابق جاپانی سائنسدانوں کے دریافت کردہ اس طریقے میں لیبارٹری ٹیسٹ اور مشینوں کی بجائے کینچوے جیسے جانور ’راﺅنڈورم‘ کا استعمال کیا جاتا ہے۔ اس میں اچھی بات یہ ہے کہ یہ کراہت آمیز کیڑے مریض کے پاس نہیں لائے جاتے بلکہ مریض سے پیشاب کا نمونہ لیا جاتا ہے اور پھر اس نمونے میں ان کیڑوں کو ڈال کر ٹیسٹ کیا جاتا ہے۔

یہ طریقہ وضع کرنے والی ٹیم کے سربراہ ڈاکٹر تاکاایکی ہیرتسو کا کہنا ہے کہ ”کینسر کی تشخیص کرنے والی یہ کٹ محض 90پاﺅنڈ میں مہیا ہو سکتی ہے اور اس سے 15مختلف قسم کے کینسر کی موثر تشخیص کی جا سکتی ہے۔ ہم نے یہ تحقیق کتوں کی ناک سے سونگھ کر مختلف چیزوں کو کا پتا چلانے کی صلاحیت سے متاثر ہو کر شروع کی اور اس میں ہمیں کامیابی حاصل ہوئی۔ راﺅنڈ ورم مختلف قسم کی بو کے متعلق مختلف ردعمل ظاہر کرتے ہیں، جو بو انہیں پسند ہو وہ اس کی طرف جاتے ہیں اور جو بو پسند نہ ہو وہ اس سے دور بھاگتے ہیں، ہم ان کے اسی ردعمل کو کینسر کی تشخیص کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔“

مزید : تعلیم و صحت