معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کی جعلی اعداد و شمار پیش کئے گئے: مولانا محمد قاسم

معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کی جعلی اعداد و شمار پیش کئے گئے: مولانا ...

  

       شیرگڑھ (نمائندہ پاکستان) جمعیت علما اسلام ضلع مردان کے امیر اور سابق ممبر قومی اسمبلی شیخ الحدیث والقران مولانا محمد قاسم  نے کہا ہے کہ صوبہ خیبر پختونخواہ اور پورے ملک کو جس مقام پر لاکھڑا کیا گیا ہے اس کو دوبارہ سنھبالنے میں طویل عرصہ لگے گا بد قسمتی سے ملک ایسے لوگوں کے حوالہ کیا گیا جس کا برا حشر آج ہر کوئی دیکھ رہا ہے ساڑھے 8سال کے اقتدار میں موجودہ حکمرانوں نے صرف ایک کام کیا ہے اور وہ یہ ہے کہ ہمارے نئی نسل کو عریانی اور فحاشی کے ذریعے تباہی بربادی کے راستے پر لگادیا ہے۔ اسمبلیوں معیشت کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کے جعلی اعداد و شمار پیش کئے جارہے ہیں حالانکہ حال یہ ہے کہ ملک کو جھوٹے باتوں اور غلط پروپیگنڈوں سے چلانے کی کوشش کی جارہی ہے۔ بیرونی اشاروں اور اسٹبلشمنٹ کے ذریعے ملک پرایسے لوگوں کومسلط کیا گیا جو اپنے گھر چلانے کے بھی اہل نہیں ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز ایلیٹ شادی ہال شیرگڑھ میں تحصیل تخت بھائی کے مجلس عمومی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا مجلس عمومی اجلاس سے جمعیت علما اسلام تحصیل تخت بھائی کے امیر اور نومنتخب چیئرمین حافظ محمد سعید اور دیگر قائدین نے بھی خطاب کیا اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا محمد قاسم نے کہا  کہ ملک میں جان لیوا اور کمر توڑ مہنگائی سے ملک کے ہر طبقہ کے عوام پریشان اور عوام خودکشیوں پر مجبور ہو رہے ہیں عوام دو وقت کی روٹی اور علاج کے لیے ترس رہے ہیں  حکومت نے ملک کو آئی ایم ایف کے ہاتھوں گروی رکھ دیا ہے  قیمتوں میں آئے روز اضافہ سے عوام کو نفسیاتی مریض بنادیا ہے عوام مہنگائی کو مزید برداشت نہیں کر سکتے موجودہ حکمران ایک سازش اور بین الاقوامی ایجنڈے کے تحت آئے تھے جن کی کوشش تھی کہ ختم نبوتﷺ قانون میں یا آئین پاکستان ختم کی جائے لیکن جمعیت علما اسلام نے ناموس رسالت ﷺ کے تحفظ کے نام پر پندرہ ملین مارچ کئے اور سازشی منصوبوں کو خاک میں ملا دیا اورلاکھ کوششوں کے باوجود ناموس رسالتﷺ قانون میں ایک حرف کی ترمیم نہیں جاسکی۔ انہوں نے کہا کہ قومی اسمبلی اور سینٹ میں اکثریت نہ ہونے کے باوجود جمعیت علما اسلام نے ناموس رسالت ﷺ کے نام پر نکلنے اور عوام میں جانے کا فیصلہ کیا جس پر عوام نے بھر پور طریقے سے لبیک کہا جس سے عالمی ایجنڈے کو ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکمرانوں نے عوام کیساتھ جھوٹے وعدے کئے جس کی وجہ سے اب عوام کے غیض و غضب کا سامنا نہیں کرسکتے جبکہ بلدیاتی انتخابات میں بات اس حد تک پہنچ گئی تھی کہ کوئی امیدوار پی ٹی آئی کا ٹکٹ لینے کے لئے تیار نہیں تھا اور پی ٹی آئی قائدین گھر گھر جاکر لوگوں کو ٹکٹ دینے کی منتیں کرتے تھے لیکن اسے قبول کرنے کے لئے کوئی تیار نہیں تھا انہوں نے کہا کہ بلدیاتی انتخابات میں شکست کے بعد پی ٹی آئی کی تمام تنظیمیں ختم کئے گئے لیکن تنظیمیں ختم کرنے سے حقائق چھپائے نہیں جاسکتے انہوں نے کہا کہ ساڑھے تین سال قبل جمعیت علما اسلام نے جو بیانیہ عوام کے سامنے رکھا تھا اس پر آج بھی قائم و دائم ہیں کہ موجودہ حکومت دھاندلی بیرونی اشاروں پاکستانی اسٹبلشمنٹ اور جعلی مینڈیٹ کی پیداوارہے جن میں عوام کے مسائل حل کرنے کی اہلیت و صلاحیت نہیں ہے جبکہ جمعیت علما اسلام نے پندرہ ملین مارچ کرکے ثابت کردیا کہ عوام کی اصل طاقت جمعیت علما اسلام کے پاس ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کے قائدین اور مسلط ٹولے کو یہ بات تسلیم کرنا چاہئے کہ ہم اس ملک کو چلانے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکے ہیں اس لئے اپنے نا اہلی کا اعتراف کرتے ہوئے عوام کو مذید تباہی و بربادی میں دھکیلنے کی بجائے خود مستعفی ہو جائیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -