مضر صحت برف کے گولے بیماریاں بانٹنے لگے،فوڈ اتھارٹی خاموش

مضر صحت برف کے گولے بیماریاں بانٹنے لگے،فوڈ اتھارٹی خاموش

 لاہور(جاوید اقبال)فوڈ اتھارٹی اور ضلعی انتظامیہ نے صوبائی دارالحکومت کو مضر صحت اور ملاوٹ شدہ شربت،برف کے گولے کے نام پر یرقان اور پیٹ کی دیگر بیماریاں پھیلانے والوں کے حوالے کر دیا ہے جو جگر دماغ کی گرمی نکالنے اور جسم کو ٹھنڈا رکھنے کے بلند بانگ دعوے کر کے فروخت کیے جاتے ہیں جن کی تیاری میں آلودہ اور گندا پانی زہریلے کلر اور چینی کی جگہ سکرین استعمال ہوتی ہے ایسے پانی میں بیکٹریا اور ہیپا ٹائٹس اے کا وائرس پایا جاتا ہے جس کے پانی کے شوقین لوگ پیٹ کی بیماریاں لے جاتے ہیں ۔لاڑی اڈہ ،ریلوے اسٹیشن ،بس اڈے ایسا مشروب فروخت کرنے والوں کے اڈے ہیں دوسری طرف ریڑھیوں پر تربوز اور گنڈیریاں فروخت کرنے والے بھی عوام کی صحت سے کھیل رہے ہیں جس پر ضلعی انتظامیہ اور فوڈ اتھارٹی نے آنکھیں بند کر رکھی ہیں سکولوں کے باہر بھی برفانی گولے معصوم بچوں کی صحت تباہ کر رہے ہیں ۔صوبائی دارالحکومت کی سڑکیں بازار اور تعلیمی اداروں کے فرنٹ مضر صحت اور ملاوٹ شدہ شربت فروخت کرنے والوں نے مرکز بنا لیے ہیں ایسے شربتوں کا مرکز مغلپورہ نہر ہے تفصیلات کے مطابق فوڈ اتھارٹی کی نا اہلی سے شہر کی سڑکوں ،بس اڈوں ،ریلوے اسٹیشنوں کے باہر ،سینما گھروں ،بازاروں ،سکولوں کے سامنے اور سڑکوں کے کنارے ٹھنڈا شربت برف کے گولوں کے نام پر فروخت کیا جا رہا ہے بے روزگار نوجوانوں نے سڑکوں پر شربت کی ریڑھیاں اور برف کے گولوں کے اڈے بنا رکھے ہیں جو مضر صحت شربت فروخت کرتے ہیں ۔جن کی تیاری میں شربت بنانے کے لیے ایسے کلر استعمال کیے جاتے ہیں جن کے استعمال پر پابندی عائد ہے اور ایسے جعلی کلر ز کو کینسر کا موجب قرار دیا جا چکا ہے ۔جبکہ چینی کی جگہ سکرین استعمال کی جاتی ہے دوسرا گندے برتن استعمال کیے جاتے ہیں ۔نہر کنارے ایسے شربت فروخت کرنے والے نہر کا آلودہ پانی استعمال کرتے ہیں جو پینے والوں میں یرقان ،ہیپا ٹائٹس اے اور گیسٹرو پھیلارہے ہیں ان کے خلاف کارروائی کرنا فوڈ اتھارٹی یا ضلعی انتظامیہ کی ذمہ داری ہے اس حوالے سے ڈی سی او کیپٹن (ر)عثمان کا کہنا ہے کہ کارروائی فوڈ اتھاٹی کی ذمہ داری ہے ڈی جی اتھارٹی کو خط لکھوں گا انہوں نے کہا کہ اگر فوڈ اتھارٹی نے کارروائی نہ کی تو ایسی ریڑھیاں اٹھانے کے لیے ٹاؤنوں کو حکم دوں گا۔

مزید : میٹروپولیٹن 1