ایپل نے آئی واچ میں بڑی خامی تسلیم کرلی

ایپل نے آئی واچ میں بڑی خامی تسلیم کرلی
ایپل نے آئی واچ میں بڑی خامی تسلیم کرلی

  



سان فرانسسکو (نیوز ڈیسک) ٹیکنالوجی کمپنی ایپل نے گزشتہ چند روز کے دوران میڈیا میں آنے والی ان اطلاعات کی تصدیق کردی ہے کہ اس کی تازہ ترین پیشکش ایپل واچ ٹیٹو والی کلائی پر درست طور پر کام نہیں کرتی۔

مزید پڑھیں:’میرے والدین بھی میری خفیہ ویڈیو پر دھیان نہیں دیتے‘

ایپل نے اپنے آفیشل سپورٹ پیج پر لکھا کہ جسم پر کی گئی عارضی یا مستقل تبدیلیوں، مثلاً ٹیٹوز، کی موجودگی ایپل واچ کے ہارٹ ریٹ سینسر کی کارکردگی کو متاثر کرسکتی ہے۔ کمپنی کی طرف سے صارفین کو یہ ہدایت بھی کی گئی ہے کہ وہ ٹیٹوز کی صورت میں بیرونی ہارٹ ریٹ مانیٹر کا استعمال کرسکتے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق ٹیٹوز کی موجودگی میں دل کی دھڑکن مانیٹر کرنے والا آلہ درست طور پر کام نہیں کرتا کیونکہ گہرے اور ٹھوس رنگوں سے بنائے گئے ٹیٹو جسم میں سے سینسر کی روشنی کو گزرنے نہیں دیتے۔ ایپل واچ کا سینسر کلائی میں سے گزرنے والے خون کی مقدار کو مانیٹر کرنے کے لئے سبز ایل ای ڈی روشنی اور لائٹ سینسٹوفوٹو باڈیز کا استعمال کرتا ہے۔ یہ سینسر کلائی میں روشنی داخل کرکے دل کی دھڑکن کی رفتار شمار کرتا ہے اور یہ خیال کیا جاتا ہے کہ ٹیٹوز کی روشنائی ایل ای ڈی لائٹ کو اسی طرح منعکس کرتی ہے جس طرح کہ خون اسے منعکس کرتا ہے لہٰذا سینسر دل کی دھڑکن کی رفتار کی پیمائش نہیں کرپاتا۔ ایپل کی طرف سے تاحال اس مسئلہ کا کوئی ٹھوس حل تجویز نہیں کیا گیا ہے۔

مزید : سائنس اور ٹیکنالوجی