حزب اللہ اور بشار الا سد کو مضبوط کریں گے ،ایران نے حکمت عملی واضح کر دی

حزب اللہ اور بشار الا سد کو مضبوط کریں گے ،ایران نے حکمت عملی واضح کر دی

جدہ (محمد اکرم اسد / بیوروچیف ) ایران کے ایک اعلیٰ فوجی عہدیدار نے آئندہ 20 برس کے لیے ایرانی حکمت عملی پریس کانفرنس کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ ایران لبنان میں حزب اللہ اور شام میں بشار الاسد کو 2036 ء تک ناقابل تسخیر بنانے کا پختہ عزم کر چکا ہے ۔حزب اللہ کو لبنان میں مالی اور عسکری اعتبار سے خودکفیل بنا دیا جائے گا تاکہ وہ ملک کی بڑی قوت بن جائے اور لبنان میں ہر طرح کی سیاسی صورت حال سے نمٹنے کیلئے تیار ہو جائے۔ ایرانی رہنما علی خامنہ ای کے فوجی مشیر اور پاسداران انقلاب کے سابق کمانڈر جنرل رحیم صغوی نے کہا ہے کہ ایرانی حکمت عملی یہ ہے کہ بشارالاسد کی حکومت کا تختہ الٹنے کی ہر کوشش کو ناکام بنادیا جائے گا۔ اور شام کو تقسیم ہونے سے روکا جائے۔ صغوی نے کہا کہ ایران کی تقسیم کو روکنے کیلئے کردستان کے رہنماؤں کو واضح پیغام جاری کرنا ہو گا۔ انہوں نے 2036 ء میں خطے سے متعلق ایرانی پالیسی کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ خطے کے ممالک میں حکمت عملی لاگو کرنا چاہتے ہیں۔ مغربی ایشیاء کا خطہ ایران کیلئے اہم ہے۔ علاوہ ازیں ازربائی جان آرمینیا اور جواجیا میں بھی ایران گہری دل چسپی رکھتا ہے۔ صغوی نے کہا کہ ایران شنگھائی کو آپریٹو تنظیم میں بھی اپنا وجود منواتے رہنا چاہے گا۔ اس تنظیم میں چین، روس ،قازقستان، کرغستان، ازبکستان، تاجکستان ، منگولیااور افغانستان شامل ہے۔ صغوی نے الزام لگایا کہ بحرین، عراق، شام یمن افغانستان اور لبنان میں استحکام متزلزل کرنے میں امریکہ کا ہاتھ ہے کیونکہ وہ عرب ممالک کی پشت پناہی کرتا ہے اور خطے میں فوجی اڈے قائم کر رہا ہے ۔

مزید : علاقائی