مزدوروں کے عالمی دن پر ملک بھر میں جلسے ،ریلیوں اور سیمینار ز کا انعقاد

مزدوروں کے عالمی دن پر ملک بھر میں جلسے ،ریلیوں اور سیمینار ز کا انعقاد

لاہور( خبرنگار)مزدوروں کے عالمی دن کے موقع پر شگاگو کے شہداء کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے صوبائی دارالحکومت سمیت ملک بھر میں جلسے، جلوس ، ریلیاں اور سیمینار منعقد کیے گئے ہیں۔ اس حوالے سے لاہور میں مزدور تنظیموں آل پاکستان ورکرز فیڈریشن، نیشنل ٹریڈ یونین فیڈریشن،وویمن ورکرز فیڈریشن، بھٹہ مزدور یونین، لیبر پارٹی سمیت نجی و سرکاری محکموں کے ملازمین کی مزدور تنظیموں نے ریلیاں نکالیں جبکہ جلسے و جلوس کے ساتھ سیمینارز منعقد کیے گئے ہیں۔ اس موقع پر حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ حکومت آئندہ بجٹ میں مزدور کی کم از کم اُجرت 18 ہزار سے 20 ہزار کی جائے۔ اوقات کار 8 گھنٹے پر عمل درآمد اور خواتین سے جبری مشقت کا خاتمہ کیاجائے ۔ اس حوالے سے لاہور( خبرنگار) گزشتہ روز یکم مئی محنت کشوں کے عالمی دن کے موقع پر ملک بھر کے محنت کشوں نے منظم جلسے ،جلوس اور ریلیاں منعقد کرکے 1886 ؁ء کو شکاگو امریکہ میں عظیم قربانی دینے والے کارکنوں کو خراج عقیدت پیش کیا ۔ جنہوں نے اپنی جان کی قربانی دے کر غلاموں کی طرح فرسودہ اقتصادی نظام ردکرکے 8گھنٹے اوقات کار مقرر کروائے ۔ آل پاکستان ورکرز کنفیڈریشن کے زیر اہتمام پشاور ،مردان، سوات، راولپنڈی ، گجرات، سیالکوٹ، گوجرانوالہ ، ملتان، رحیم یار خان، کراچی، سکھر، حیدر آباد، کوئٹہ میں محنت کشوں کی عظیم الشان ریلیاں منعقد ہوئیں ۔لاہور میں ہزاروں محنت کشوں کی ریلی ایوان اقبال سے الحمرا ہال شاہراہ قائداعظم پر منعقد ہوئی جس میں واپڈا ،ریلوے، پی ٹی سی ایل، ٹیکسٹائل ، پی ڈبلیو ڈی ، انجینئرنگ ، کیمیکل ٹیکسٹائل ، ٹرانسپورٹ، ایریگیشن، مالیاتی ادارہ جات، میونسپل کارپوریشن، کنسٹرکشن ، بھٹہ خشت کی صنعتوں کے محنت کشوں اور نمائندگان یونین نے شرکت کی ۔ ریلی کو بزرگ مزدور رہنماء خورشید احمد جنر ل سیکرٹری، روبینہ جمیل صدر، یوسف بلوچ چیئرمین، چوہدری انور صدر ریلوے ورکرز یونین، حسن محمد رانا جنرل سیکرٹری پی ٹی سی ایل ایمپلائز یونین ، اکبر علی خان نیشنل بنک آف پاکستان، یوسف بلوچ چیئرمین ، حاجی خالد، اْسامہ طارق، خوشی محمد کھوکھر، نیاز خان،حاجی محمدیونس و دیگر ٹریڈ یونین رہنماؤں نے خطاب کیا ۔ اس ریلی میں ایک قرار داد کے ذریعے حکومت سے پور زور مطالبہ کیا گیا کہ وہ ملک میں جاگیرداری، سرمایہ داری، اجارہ داری کے فرسودہ نظام کو ختم کرکے اسلامی مساوات پر مبنی نظام قائم کرے ملک میں زرعی اصلاحات کا نفاذ کرے ، نوجوانوں کو روز گار مہیا کیا جائے۔ سستی بجلی کی فراہمی کو یقینی بنایاجائے اور آئندہ بجٹ میں سرکاری و نیم سرکاری و نجی اداروں کے ملازمین کی تنخواہوں میں 30فیصدی اضافہ کیا جائے اور مزدوروں کی کم از کم اجرت 18ہزار روپے ماہوار کی جائے یا پھر مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کیا جائے جبکہ پنشن کم از کم 15ہزار روپے ماہانہ مقرر کی جائے۔قومی مفاد عامہ کے اداروں ، بمعہ ریلوے، آئل اینڈ گیس ، سول ایوی ایشن، بجلی اور پی آئی اے کی مجوزہ نجکاری کی بجائے ان اداوں میں اہل دیانت دار انتظامیہ کی تعیناتی کرکے ان ادارہ جات کی کارکردگی میں اضافہ کیا جائے اور آئی ایل او کے کنونشن کے مطابق حکومت سہ فریقی بنیاد پر قومی لیبر کانفرنس کا انعقادکیا جائے اور ترقی پسندانہ لیبر پالیسی کا نفاذ کرے۔اسی طرح ورکنگ ویمن آرگنائزیشن کی یوم مئی پر منعقدہ ریلی میں خواتین رہنما آئمہ محمود ، سلمیٰ لیاقت ، بشریٰ تبسم ، نسیم انور اور صفیہ بی بی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ اوقات کار 8 گھنٹے اور خواتین سے جبری مشقت کا خاتمہ کیا جائے۔

مزید : علاقائی