ہائی کورٹ نے نویں جماعت میں داخلوں کے لئے ”ب“ فارم کی وصولی روک دی

ہائی کورٹ نے نویں جماعت میں داخلوں کے لئے ”ب“ فارم کی وصولی روک دی
ہائی کورٹ نے نویں جماعت میں داخلوں کے لئے ”ب“ فارم کی وصولی روک دی

  


لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے نہم کلاس میں داخلے کے لئے طلبائسے ”ب“ فارم کی وصولی روکتے ہوئے چیئرمین نادرا، کو دوباہ نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیاہے۔جسٹس عائشہ اے ملک کے روبرو درخواست گزار طالب علم طاہر خان کے وکیل شیراز ذکائنے موقف اختیار کیا کہ نہم کلاس میں داخلے کے لئے نادرا سے”ب“ فارم منسلک کرنے کی لازمی شرط بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہے، انہوں نے کہا کہ اس شرط کی وجہ سے طلبا کو اضافی اخراجات اور مشکلات برداشت کرنا پڑ رہی ہیں، پانچویں اور آٹھویں جماعت کے امتحانات سے قبل تعلیمی بورڈز میں طلبا کی رجسٹریشن کے باوجود نہم کلاس کے لئے ”ب“ فارم مانگا جانا غیرقانونی اقدام ہے، تعلیمی بورڈز کے قواعد و ضوابط میں کہیں نہیں لکھا کہ نہم کلاس کے داخلے کے وقت ب فارم منسلک کیا جانا لازمی ہے۔لاہور بورڈ کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ بوٹی مافیا کو روکنے کے لئے ”ب“ فارم کی شرط عائد کی گئی۔نادرا کی جانب سے جواب داخل نہ کرانے پر عدالت نے طالب علموںسے”ب“ فارم کی وصولی روکنے کا حکم دے دیا،عدالت نے کیس کی مزید سماعت دو ہفتوں تک ملتوی کرتے ہوئے چیئرمین نادرا سے جواب طلب کر لیاہے۔

مزید : لاہور