تین روزہ عالمی صوفی کانفرنس کراچی میں جاری

تین روزہ عالمی صوفی کانفرنس کراچی میں جاری

کراچی(این این آئی)یکم مئی: عالمی صوفی کانفرنس میں شریک جید مشائخ اورعلماء اہلسنت نے کہا ہے کہ اسلام کے نام پر قتل و غارت کرنے، دوسرے مسلمانوں کو کافر قرار دینے اور ان کے خلاف پرتشدد کارروائیاں کرنے والے گمراہی کا شکار ہیں، ان کا اہلسنت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ ہم انہیں دعوت دیتے ہیں کہ وہ قرآن اور سنت کی روشنی میں اسلام کی اصل روح تصوف کو پہنچانیں اور ہدایت کی طرف پلٹ آئیں۔ وہ ادارہ سلوک الصوفیہ کے تحت منعقدہ تین روزہ عالمی صوفی کانفرنس 2017 کے نجی ہوٹل میں منعقدہ دوسرے سیشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔دوسرے روز کی تقریب سے دمشق کے ممتاز عالمی اسکالر شہزادہ غوث الاعظم ڈاکٹر عبد العزیز الخطیب الجیلانی ، خطیب اعظم شام شیخ ڈاکٹر محمودناصر الحوط، مفتی اعظم لبنان ڈاکٹر اسامہ عبد الرزاق الرفاعی ، ترکی کے فضیلۃ الشیخ محمد کسکن ، عراق کے فضیلۃ الشیخ مفتی ڈاکٹر محمد جراد العیساوی، فضیلۃ الشیخ السید لطیف رؤف رضا، مراکش کے فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر ادریس فاسی فہری ، مصر کے فضیلۃ الشیخ مصطفی محمود زغلول القادری ، کینیا کے فضیلۃ الشیخ فیصل محمود احمد عامودی، تیونس کے فضیلۃ الشیخ جسٹس محدث محمد الکامل سعادہ، الجزائر کے فضیلۃ الشیخ احمد معزوز، شام کے فضیلۃ الشیخ حمدی کنجو، شمالی یاسین، سابق وفاقی وزیر حاجی حنیف طیب، علامہ عامر اخلاق شامی اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔ اس موقع پرتمام مشائخ نے گزشتہ سال چیچنیا میں ہونے والی علماء کانفرنس میں پاس ہونے والی قرارداد کی بھی بھرپور تائید و حمایت کا اعلان کیا۔ مشائخ نے کہا کہ جو گروہ قرآن و سنت کے خلاف جائیں گے ان کا اہلسنت سے کوئی تعلق نہیں ۔انہیں اسلام کی صحیح شکل تصوف کی طرف رجوع کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ مسلمانوں کو اپنا احتساب خود کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ تصوف اور اہلسنت میں قتل و غارت اور تشدد کا کوئی گنجائش نہیں اور ایسے لوگوں کا بھی اہلسنت سے کوئی تعلق نہیں۔ علماء و مشائخ نے کہا کہ صوفیائے کرام نے ہمیشہ عدم تشدد کا درس دیا ۔صو فیا ئے کرام ہی دین اسلام کے سفیر ہیں جنہوں نے تعصبات و انتشار کو ختم کر کے لوگوں کو بھائی چارے ،اتحاد ،اخلاس اور اخوت کا درس انقلاب دیا۔انہوں نے کہا کہ شر یعت و طر یقت سے مر بو ط صو فیا ئے کرام کی تعلیما ت و ہدایات صو فی ازم ہے ، موسیقی ،منشیات، ناچ گا نو ں سے اسلام اور صو فی ازم کا قطعاًکوئی تعلق واسطہ نہیں ہے۔ انہوں نے زور دیتے ہوئے کہا کہ موجو دہ عالمی تنا ظر میں صو فیا ئے کرام کے کردار و عمل سے واقف کرانے اور خا نقا ہی رشد و ہدایت کو عالمی سطح پر مو ثر انداز سے پیش کر نا ہو گا۔ علاوہ ازیں اتوار کی رات نشترپارک میں منعقد ہونے والے پہلے سیشن سے خطاب کرتے ہوئے جما عت اہلسنّت پاکستان کراچی کے امیر علامہ سید شاہ عبد الحق قادری نے کہا کہ اس کانفرنس کے انعقاد کا مقصد عالم اسلام کو امن و سکون کا گہوارہ بنا ناہے،عالمی طاغوتی طاقتوں نے ایک منظم سازش کے تحت اس وقت پو ری دنیا میں صرف اسلامی ممالک میں بھیانک تباہی پھیلا رکھی ہے ۔ افغانستان ،لیبیا ،عراق،مصر،کشمیر اور یمن میں اپنے ناپاک عزائم کی تکمیل کے بعد اس وقت شام اور برما کے مسلمانوں پر قیامت صغریٰ برپا ہے۔ مسلمانوں کے بہتے خون اور کٹتے جسموں کا نہ رکنے والا سلسلہ جاری ہے۔ القاعدہ اور داعش جیسی تنظیمیں شیطانی طاقتوں کے آلہ کار بنی ہوئی ہیں جبکہ مسلم حکمران بے غیرتی کی چادر اوڑھ کر اپنی عیاشیوں میں مصروف ہیں ۔منتظمین کے مطابق عالمی صوفی کانفرنس کے انعقاد کا اولین مقصد پر فتن ماحول میں اسلام کے عالمگیر پیغام امن و محبت عام کرنا اور دین کی تبلیغ و اشاعت میں صوفیاء کے سدا بہار احترام انسانیت امن پیار اور رواداری کی تعلیمات سے عوام کو روشناس کرانا ہے۔ کانفرنس کا تیسرا اور آخری سیشن منگل ، 2مئی کو جامعہ کراچی میں منعقد ہو گا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر