وہ 5 کشمیری جنہوں نے 20 نوجوان پاکستانی لڑکیوں کی زندگی تباہ کردی مگر کیسے؟ ایسا دعویٰ کہ آپ کیلئے بھی اپنی آنکھوں پر یقین کرنا مشکل ہوجائے گا

وہ 5 کشمیری جنہوں نے 20 نوجوان پاکستانی لڑکیوں کی زندگی تباہ کردی مگر کیسے؟ ...
وہ 5 کشمیری جنہوں نے 20 نوجوان پاکستانی لڑکیوں کی زندگی تباہ کردی مگر کیسے؟ ایسا دعویٰ کہ آپ کیلئے بھی اپنی آنکھوں پر یقین کرنا مشکل ہوجائے گا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

میرپور(ویب ڈیسک) برطانیہ لے جانے کے سہانے خواب دکھا کر شادی کرنے والے ایک ہی خاندان کے 5 افراد نے 20 پاکستانی لڑکیوں کی زندگی تباہ کردی، لڑکیوں کو برطانیہ لے جانے کا جھانسہ دیا اور شادی کے بعد چھوڑ کر چلے گئے۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

میرپور آزاد کشمیر پریس کلب میں متاثرہ خواتین صائمہ کوثر، سمیرا پروین، سوہنیا بشیر اور کرن نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے الزام لگایا کہ برطانیہ کے علاقے ہیلی فیکس کے رہائشی ممتاز عرف تاجا پہلوان اور اس کے بھتیجے خواتین کو برطانیہ لے جانے کے خواب دکھا کر شادی کرتے ہیں اور چھوڑ کر چلے جاتے ہیں۔ خواتین نے الزام لگایا کہ تاجا پہلوان نے 7، اس کے بھتیجے محمد علی نے 3، نذر علی نے 5، غضنفر محمود نے 2 جبکہ محمد بشیر نے 3 شادیاں کی ہیں۔ یہ لوگ منشیات کا کاروبار کرتے ہیں۔

واضح رہے کہ تاجا پہلوان میرپور کے نواحی علاقے نیو آبادی سنگوٹ کا رہائشی ہے۔ خواتین کا کہنا تھا کہ طلاق مانگنے پر ان پر زیورات چوری کا الزام لگا دیا جاتا ہے۔پریس کانفرنس کے دوران ان خواتین نے میڈیا کو نکاح ناموں کی کاپیاں بھی دکھائیں۔اس سوال پر کہ اگر ملزمان نے 18 نکاح کیے تو پریس کانفرنس کے لیے 5 خواتین کیوں آئیں؟ ان خواتین کا کہنا تھا کہ دیگر خواتین ہم سے رابطے میں نہیں ہیں۔

سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس (ایس ایس پی) ریاض حیدر بخاری کا کہنا تھا کہ متاثرہ خواتین نے پولیس سے رابطہ نہیں کیا تاہم تاجاپہلوان کی ایک درخواست ملی ہے جس میں خواتین کے الزامات کو بے بنیاد قرار دیا گیا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ معاملے کی تحقیقات کے لیے ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس (ڈی ایس پی) سٹی چوہدری انصر کو ہدایت کی گئی ہے۔

مزید : علاقائی /آزاد کشمیر /میرپور