دیہاتوں میں رہنے و الی پاکستانی حاملہ خواتین کیلئے کینیڈا سے انتہائی شاندار خوشخبری آگئی

دیہاتوں میں رہنے و الی پاکستانی حاملہ خواتین کیلئے کینیڈا سے انتہائی شاندار ...
دیہاتوں میں رہنے و الی پاکستانی حاملہ خواتین کیلئے کینیڈا سے انتہائی شاندار خوشخبری آگئی

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)شعورو آگہی کی کمی کے باعث پاکستان کے دیہی علاقوں میں زچہ و بچہ کی صحت کی صورتحال انتہائی ناگفتہ بہ ہے جس کی وجہ سے یہاں حمل ضائع ہونے اورپیدائش کے فوری بعد بچوں کی شرح اموات بہت زیادہ ہے۔ سیو دی چلڈرن کی 2014ءکی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان میں ہر 1000میں سے 40.6فیصد حاملہ خواتین کے حمل ضائع ہو جاتے ہیں یا بچے کی پیدائش کے پہلے دن ہی موت واقع ہو جاتی ہے۔ کینیڈا میں یہ شرح 2.5فیصد ہے۔ اب ان دیہی پاکستانی حاملہ خواتین کے لیے کینیڈا سے بڑی خوشخبری آ گئی ہے۔ کینیڈا کے شہریوں نے ان پاکستانی خواتین کے لیے ایک میسیج سروس شروع کی ہے جس میں انہیں وائس پیغامات کے ذریعے حمل اور بچے کی نگہداشت کے حوالے سے مفید مشورے دیئے جائیں گے اور مناسب غذاﺅں کے حوالے سے رہنمائی کی جائے گی۔

لڑکے کے گلے میں پٹہ ڈالے پاکستانی لڑکی کی ایک تصویر جس نے انٹرنیٹ پر ہنگامہ برپاکردیا،حقیقت آپ بھی جانئے

motherboard.vice.com کی رپورٹ کے مطابق یہ اقدام کینیڈین شہر ٹورنٹو کے شہریوں 23سالہ کامل شفیق اور 29سالہ اسراءناصر نے اٹھایا ہے۔ ان کی ٹیم میں 15دیگر افراد بھی شامل ہیں۔انہوں نے اس مفت سروس کا نام ”امی“ رکھا ہے۔ اس سروے کے ذریعے حمل کے پہلے دن سے لے کر بچے کی پیدائش کے ایک سال بعد تک پاکستان کی دیہی خواتین کو مفت مشورے دیئے جائیں گے۔ رپورٹ کے مطابق خواتین کو ریکارڈ کیے گئے پیغامات ہفتے میں دو سے تین بار ارسال کیے جائیں گے جو ان کی رہنمائی کریں گے۔ یہ پیغامات 2سے 3منٹ طویل ہوں گے۔

مزید : تعلیم و صحت