جسٹس ناصرہ جاوید اقبال کے گھر چھاپہ مارنے والا ڈی ایس پی معطل

جسٹس ناصرہ جاوید اقبال کے گھر چھاپہ مارنے والا ڈی ایس پی معطل
جسٹس ناصرہ جاوید اقبال کے گھر چھاپہ مارنے والا ڈی ایس پی معطل

  

لاہور (ویب ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے ولید اقبال نے دو نمبر کو اسلام آباد جانے سے کارکنوں کو روکنے کیلئے پکڑدھکڑ، حراساں کرنے، گرفتاریوں اور کنٹینرز لگاکر راستے بلاک کرنے کے اقدام جبکہ پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری نبیل محمود طارق نے صوبہ بھرمیں کنٹینرز اور گاڑیوں کی پکڑ دھکڑ کے اقدام کو چیلنج کردیا، مسٹر جسٹس شاہد حمید ڈار کی سربراہی میں 3 رکنی فل بنچ نے دونوں پٹیشن پر چیف سیکرٹری ، سیکرٹری ہوم پنجاب اور آئی جی پنجاب کو نوٹس جاری کرتے ہوئے آج جواب طلب کرلیا۔

پاناما لیکس تحقیقات : سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران وفقہ ، حکومتی وکلاء جوڈیشل کمیشن پر مشاور ت کیلئے وزیر اعظم کے پاس پہنچ گئے

عدالت نے جسٹس (ر) ناصرہ اقبال کے گھر ریڈ کرنے والے ڈی ایس پی کی معطلی کا حکم دے دیا۔ ولید اقبال کی پٹیشن میں کہا گیا تھا کہ جمہوریت میں احتجاج کرنا جلسے جلوس کرنا ہر سیاسی جماعت کا حق ہے، مگر اس کے برعکس حکمرانوں کے ممکنہ حکومت گرانے کے خوف سے کارکنوں کو گرفتار کرکے نظربند کرنا شروع کردیا ہے۔پنجاب بھر سے کارکنوں کو اسلام آباد پہنچنے سے روکنے کیلئے کنٹینرز لگاکر سیل کرنا شروع کردیا ہے، ان کو روکا جائے، گرفتاریاں اور کارکنوں کی نظربندیوں کو کالعدم قرار دیا جائے۔پاکستان گڈز ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن کی پٹیشن میں استدعا کی گئی ہے ان کے کنٹینرز کی پکڑ دھکڑ کو روکا جائےا ور جو کنٹینرز اور گاڑیوں حکومت کے قبضے میں ہیں ان کو چھوڑنے کا حکم دیا جائے۔

سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں موجودہ و زیراعظم میاں نواز شریف، جاوید ہاشمی، یونس حبیب، غلام مصطفی جتوئی، جام صادق علی، محمد خان جونیجو، عبدالحفیظ پیرزادہ وغیرہ کو گنہگار ٹھہرایا، ایف آئی اے اور نیب کو معاملہ کی تحقیقات کرکے ایکشن لینے کا حکم دیا مگر ابھی تک عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر عملدرآمد نہیں کیا گیا۔ اب جبکہ عام الیکشن قریب ہیں ملک میں سیاسی کشیدگی عروج پر ہے، ضرورت اس امر کی ہے کہ ملکی سیاسی حالات کو ٹھیک کرنے کیلئے ایف آئی اے اور چیئرمین نیب کو حکم دیا جائے کہ وہ اصغر خان کیس کے عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر عملدرآمد کرے۔

مزید : لاہور