قیدی عدالتوں میں پیش نہ کئے جا سکے،3دنوں میں10ہزار فو جداری مقدمات متا ثر

قیدی عدالتوں میں پیش نہ کئے جا سکے،3دنوں میں10ہزار فو جداری مقدمات متا ثر

لاہور(نامہ نگار) پولیس کی لاء اینڈ آرڈر میں مصروفیت کے باعث ملزمان عدالتوں میں پیش نہ کئے جاسکنے پر3روز میں تقریبا 10ہزار فوجداری مقدمات متاثر ہوئے ہیں اور اسی وجہ سے یہ مقدمات ایک ایک ماہ تک التواء میں چلے گئے ہیں جبکہ 100سے زائد گواہوں کے بیانات بھی قلمبند نہیں ہوسکے ، واضح رہے کہ ماتحت عدالتوں میں تیسرے روز بھی ملزمان جیلوں سے لا کر پیش نہ کئے جاسکنے جس کی وجہ سے جبکہ سائلین کو بھی شدید مشکلات کا سامنا کرنا رہاہے ۔تفصیلات کے مطابق یہ مقدمات ایک ایک ماہ کے لئے التوا میں چلے گئے ہیں جبکہ 3 روز کے دوران 100گواہوں کے بیانات قلمبند نہ ہوسکے عدالتوں کی طرف سے دوبارہ گواہوں کو اگلی تاریخوں کے لئے پابند کیا گیا۔ملزمان کے نہ آنے کی وجہ سے صرف درخواست ضمانتوں پر کارروائی کی جاتی رہی ،یہ بھی ان کیسوں میں کارروائی ہوئی جن میں ملزمان ضمانتوں پر تھے،ملزمان کے نہ آنے سے عدالتوں نے جن مقدمات میں اپنے فیصلے سنانے تھے وہ بھی نہ سنائے جاسکے،عدالتوں میں جیل سے ملزمان کی روبکار حاضری کے لئے بھجوائی جاتی رہیں۔اس حوالے سے وکلاء کا کہنا ہے کہ پہلے ہی عدالتوں میں مقدمات کی بھرمار ہے اور اوپر سے پولیس کے لاء اینڈ آرڈ کی صورتحال میں مصروفیت کے وجہ سے مقدمات مزید التواء کا شکار ہوتے ہیں جبکہ عدالتوں میں آنے والے سائلین کو بھی شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے ،انہوں نے مزید کہا کہ ان حالات میں سے سب زیادہ متاثر عدالتوں میں آنے والے لوگ ہوئے ہیں ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1