نوشہرہ میں پی ٹی آئی کے یوتھ کونسلر پربے پناہ تشدد

نوشہرہ میں پی ٹی آئی کے یوتھ کونسلر پربے پناہ تشدد

نوشہرہ(بیورورپورٹ) نوشہرہ کلاں پولیس نے پی ٹی آئی کے یوتھ کونسلر کو سیاسی انتقام کا نشانہ بناکر سنگین ڈکیتوں کے وارداتوں میں ملوث کر کے ناجائز طور پر گرفتار کر کے تھانے میں ان کو بد ترین تشددکا نشانہ بنادیا ریمانڈ کے دوران نوشہرہ کلاں کے تفتیشی افسرنے ایک لاکھ روپے رشوت کا مطالبہ کیااگرایک لاکھ رشوت نہ دیاگیا تو ان پر مزید ڈکیتیوں کے مقدمات درج کریں گے یوتھ کونسلر عثمان کو تھانے بلاکر ان کوگرفتار کرکے موٹرسائیکل بھی چھین لی موجودہ صوبائی حکومت سے انصاف کی توقع نہیں جنرل راحیل شریف اور سپریم کورٹ انکوائری کراکرہمیں انصاف دلا دیں ان خیالات کااظہار نوشہرہ کلاں کے رہائشی پی ٹی آئی کے یوتھ کونسلر محمدعثمان کے والد شاہد حسن نے نوشہرہ پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر ارشدحسین، راہدحسین، باچا سید، جاوید اقبال، فیصل پراچہ، تجمل اور علی خان بھی موجود تھے انہوں نے کہا کہ ہم نوشہرہ کلاں کے معزز اور سیاسی گھرانے سے تعلق رکھتے ہیں اورہم اپنا جائز کاروبار کررہے ہیں لیکن چند دن قبل نوشہرہ کلاں پولیس اور ڈی پی او نوشہرہ نے ہمارے ساتھ انتہائی ناجائز سلوک روا کرکے میرے جواں سالہ ایسوسی ایٹ انجینئر اور یوتھ کونسلر جو کہ بلدیاتی انتخابات میں بلامقابلہ منتخب ہوگیاتھا ڈی پی او نوشہرہ اور نوشہرہ کلاں ایس ایچ او نے سیاسی انتقام اور مخالفین کے کہنے پر میرے بیٹے عثمان کو ناجائز طورپر ڈکیتی کے واردات میں ملوث کرکے گرفتار کیا ڈکیتی کے واردات میں ملوث جن ملزمان کو گرفتار کیاگیاہے انہوں نے اعتراف کیاہے کہ عثمان ہمارے ساتھ واردات میں شامل نہیں تھا لیکن اس کے باوجود نوشہرہ کلاں پولیس نے میرے بیٹے کو ڈکیتی کی واردات میں ملوث کرکے ان کا دوروزہ جسمانی ریمانڈ لیکر ان کو بدترین تشدد کا نشانہ بنایا جسمانی ریمانڈ کے دوران تفتیشی افسر فضل محمد اور مراد ہم سے بار بار ٹیلی فون پر ایک لاکھ روپے رشوت کا مطالبہ کرتے رہے اور یہ بھی بتاتے رہے کہ رشوت نہ دینے پر ڈکیتی کے مزید وارداتوں میں ملوث کریں گے جس پر ہم نے انکار کیا اور ہمارے انکار پر ان کو اصل ملزمان سے زیادہ میرے بیٹے پر تشدد کیاگیا انہوں نے کہا کہ ہمیں حکومت سے اور پولیس حکام سے انصاف کی توقع نہیں اس لئے ہم جنرل راحیل شریف اور چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ سے انصاف کی اپیل کرتے ہیں ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر