144کے نفاذ کیخلاف درخواست پر ہوم سیکرٹری پنجاب سے جواب طلب

144کے نفاذ کیخلاف درخواست پر ہوم سیکرٹری پنجاب سے جواب طلب

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس شاہد حمید ڈار ٗجسٹس انوار الحق اور جسٹس محمد قاسم خان پر مشتمل فل بینچ نے تحریک انصاف کا دھرنا ناکام بنانے کے لئے پنجاب بھر میں دفعہ 144کے نفاذ کے خلاف درخواست پر ہوم سیکرٹری پنجاب سے3 نومبر تک جواب طلب کر لیا، عدالت نے آئندہ سماعت پر ہوم ڈیپارٹمنٹ کے ذ مہ دار افسر کو صوبے بھر میں دفعہ144 کے نفاذ کے تمام نوٹیفکیشنز سمیت طلب کر لیا۔جسٹس شاہد حمید ڈار، جسٹس انوار الحق اور جسٹس محمد قاسم خان پر مشتمل تین رکن فل بنچ نے تحریک انصاف کے پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر میاں محمود الرشید کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کی طرف سے شیراز ذکاء ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ دفعہ144تب نافذ کی جاتی ہے جب پبلک پراپرٹی کو نقصان پہنچنے کا خدشہ ہو یا نقص امن پیدا ہونے کی صورتحال بن جائے لیکن حکومت نے تحریک انصاف کا دھرنا ناکام بنانے کیلئے صوبے بھر میں دفعہ ایک سو چوالیس نافذ کر دی ہے اور اس دفعہ کی آڑ میں کارکنوں کی پکڑ دھکڑ اور سڑکیں بلاک کرنے کا سلسلہ جاری ہے، انہوں نے مزید موقف اختیار کیا کہ ملک میں آزادانہ گھومنا پھرنا ہر شہری کا بنیاد آئینی حق ہے ، دفعہ144 آئین کے آرٹیکل 14، 15 اور16 کی خلاف ورزی ہے، انہوں نے استدعا کی کہ دفعہ ایک سو چوالیس کو غیرآئینی قرار دیتے ہوئے اس کے نفاذ کے تمام نوٹیفکیشنز کالعدم کئے جائیں، ابتدائی سماعت کے بعد عدالت نے ہوم سیکرٹری پنجاب کو نوٹس جاری کرتے ہوئی 3 نومبر تک تفصیلی جواب طلب کر لیا، عدالت نے ہوم ڈیپارٹمنٹ کے ذمہ دار افسر کو آئندہ سماعت پر طلب کرتے ہوئے دفعہ 144 کے تمام نوٹیفکیشنز اور انہیں جاری کرنے کی وجوہات پر مبنی رپورٹ بھی پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر