”جنس پرستی اسلام سے متصادم نہیں“ امام مسجد کے بیان نے ہنگامہ کھڑا کردیا

”جنس پرستی اسلام سے متصادم نہیں“ امام مسجد کے بیان نے ہنگامہ کھڑا کردیا
”جنس پرستی اسلام سے متصادم نہیں“ امام مسجد کے بیان نے ہنگامہ کھڑا کردیا

  

کیپ ٹاؤن(مانیٹرنگ ڈیسک) جنوبی افریقہ میں ایک امام مسجد کی جانب سے ہم جنسی پرستی کو اسلام کا حصہ قرار دیئے جانے پر ہنگامہ برپا ہے، محسن ہینڈرکس نامی امام مسجد کا کہنا ہے کہ ہم جنس پرستی اسلام سے متصادم نہیں بلکہ اس کا حصہ ہے۔جرمن نشریاتی ادارے کے مطابق اس حوالے سے ایک مراسلہ بھی شائع ہوا ہے جس میں سیرتان سینڈرسن نے لکھا ہے کہ محسن ہینڈرکس کیپ ٹاؤن کی ایک مسجد میں امام ہیں جو نہ صرف ہم جنسی پرستی کو اسلام کا حصہ قرار دیتے ہیں بلکہ ہم جنس پرست مردوں اور خواتین کے حقوق کے لیے جدوجہد بھی جاری رکھے ہوئے ہیں۔محسن ہینڈرکس کا موقف ہے کہ ہم جنس پرست مسلمان مردوں اور عورتوں کے حقوق کو اس طرح تسلیم کیا جانا چاہیے کہ وہ اپنی مرضی کے مطابق باعمل مسلمان بھی رہ سکیں۔

قریب دو عشروں سے اپنی اس سوچ پر عمل پیرا رہتے ہوئے محسن ہینڈرکس اپنے حامیوں کا ایک ایسا چھوٹا سا حلقہ بھی قائم کر چکے ہیں، جس کا نام Inner Circle ہے۔ہینڈرکس نہ صرف مردوں اور خواتین کو مل کو نماز پڑھنے کی اجازت دیتے ہیں بلکہ اس کی حوصلہ افزائی بھی کرتے ہیں۔محسن ہینڈرکس کو اب تک اپنی مذہبی سوچ اور ذاتی جنسی رویوں پر سرعام عمل پیرا رہنے کی وجہ سے کئی بار قتل کی دھمکیاں بھی مل چکی ہیں۔

محسن ہینڈرکس کا قائم کردہ ’اِنر سرکل‘ قریب 20 برسوں سے فعال ہے اور اس کا صدر دفتر کیپ ٹاو¿ن کے مضافات میں واقع ایک جنوبی قصبے ’وائن برگ‘ میں ہے۔ اس ’اندرونی حلقے‘ میں ہم جنس پرست مرد اور خواتین دونوں ہی شامل ہیں لیکن یہ صرف ایسے مردوں اور خواتین تک ہی محدود نہیں ہے۔محسن ہینڈرکس نے جرمن ادارے کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ ان پر واضح ہوا کہ اسلام کے نام پر جو بہت سی ناانصافیاں کی جاتی ہیں، ان میں سے مسلمان ہم جنس پرستوں کے بارے میں بہت منفی سوچ محض ایک پہلو ہے، جس کا کئی طرح کے دیگر تعصبات کی طرح تدارک کیا جانا چاہیے۔

مزید : بین الاقوامی