وہ تالاب جس میں جو جاندار جاتا ہے ہمیشہ کیلئے غائب ہوجاتا ہے، آخر اس کی تہہ میں کیا ہے؟ بالآخر سائنسدانوں نے معلوم کرلیا، جواب جان کر خود بھی حیران پریشان رہ گئے

وہ تالاب جس میں جو جاندار جاتا ہے ہمیشہ کیلئے غائب ہوجاتا ہے، آخر اس کی تہہ ...
وہ تالاب جس میں جو جاندار جاتا ہے ہمیشہ کیلئے غائب ہوجاتا ہے، آخر اس کی تہہ میں کیا ہے؟ بالآخر سائنسدانوں نے معلوم کرلیا، جواب جان کر خود بھی حیران پریشان رہ گئے

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) دنیامیں کئی مقاماتِ حیرت ہیں جن کی پراسراریت کی گتھیاں آج تک انسان سلجھا نہیں سکا۔ ایسا ہی ایک حیرت کدہ خلیج میکسیکو میں موجود ہے۔ یہ کھارے پانی کا ایک گڑھا ہے جو اتنا گہرا ہے کہ اس پیندے کا تاحال پتا نہیں چلایا جا سکا۔ اس گڑھے میں جو ذی روح چلا جائے زندہ واپس نہیں آتا۔ یہی وجہ ہے کہ اسے ”موت کا گڑھا“ بھی کہا جاتا ہے۔امریکہ کی ٹیمپل یونیورسٹی کے تحقیق کاروں نے یہ گڑھا 2014ءمیں روبوٹس کی مدد سے دریافت کیا تھا۔ اب ماہرین نے اس گڑھے کا پہلا ہائی ریزولوشن نقشہ تیار کرنا شروع کر دیا ہے اور ان کا کہنا ہے کہ اس سے دوسرے سیاروں پر زندگی کی تلاش میں بہت مدد ملے گی۔

خلاءسے دیکھا جائے تو عراق کے اوپر آسمان پر کیا نظر آتا ہے؟ سیٹلائٹ تصاویر سامنے آگئیں، دیکھ کر آپ کیلئے اپنی آنکھوں پر یقین کرنا مشکل ہوجائے گا

رپورٹ کے مطابق اس موت کے گڑھے کا قطر 100فٹ ہے اور یہ خلیج کی سطح میں 3300فٹ گہرائی میں واقع ہے۔ اس کا پانی اس کے آس پاس موجود سمندری پانی سے 4سے 5گنا زیادہ نمکین ہے۔یہی وجہ ہے کہ اس کا پانی نیچے ہی رہتا ہے اور اس میں میتھین گیس اور ہائیڈروجن سلفائیڈ جیسے زہریلے کیمیکل اس میں پیدا ہوتے ہیں جو باقی سمندری پانی میں حل نہیں ہوتے۔ٹیمپل یونیورسٹی کے ماہرین نے اس کے اندر کئی بڑے بڑے آئسوپوڈز مرے ہوئے دیکھے ہیں جو آس پاس کے سمندری پانی میں زندہ موجود ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس