سپیکر خیبرپختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی کی زیر صدارت اجلاس کا انعقاد

  سپیکر خیبرپختونخوا اسمبلی مشتاق احمد غنی کی زیر صدارت اجلاس کا انعقاد

  



پشاور (سٹاف رپورٹر)سپیکر خیبرپختونخوااسمبلی مشتا ق احمد غنی نے آج صوبائی اسمبلی سیکرٹریٹ میں حویلیاں تا دھم توڑ ایبٹ آباد بائی پاس روڈ کی جلد ازجلد تعمیر کے حوالے سے ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کی۔اجلاس میں صوبائی وزیر برائے مواصلات وتعمیرات اکبرایوب خان کے علاوہ محکمہ سی اینڈ ڈبلیو،فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن،محکمہ خزانہ، محکمہ پی اینڈ ڈی،پختونخواہائی ویزاتھارٹی اور نیسپاک کے اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔اجلاس میں متعلقہ حکام نے سپیکرمشتاق غنی کو ایبٹ آباد بائی پاس روڈ کی تعمیر اور اس سلسلے میں پیش آنے والے مسائل پر تفصیلی بریفنگ دی۔18.70کلو میٹر لمبے ایبٹ آباد بائی پاس روڈ جوپلوں حفاظتی جنگلوں اور انڈرپاسز پر مشتمل ہے،کی کل لاگت 3ارب روپے لگائی گئی ہے،جس میں سے اب تک 38کروڑ روپے متعلقہ محکموں کو جاری ہو چکے ہیں جبکہ دو ارب کی مزید رقم اس سال دسمبر تک ریلیز ہوجائے گی۔اس موقع پر سپیکر مشتا ق احمد غنی نے کام کی سست رفتار پر متعلقہ حکام کو آڑے ہاتھوں لیا اور شدید برہمی کا اظہار کیا۔سپیکر نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کی شدید خواہش ہے کہ اس علاقے میں سیاحوں کیلئے مزید سہولیات دی جائیں تاکہ سیاحت کو فروغ دی جاسکے اور یہ سڑک اس خواہش کو پورا کرنے میں اہم کردار ادا کریگی۔انہوں نے کہا کہ ان کی حال ہی میں وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوامحمود خان سے اس روڈ کے حوالے سے ایک اہم ملاقات ہوئی تھی جس میں انہوں نے دسمبر 2019تک بقایا فنڈزجاری کرنے کی یقین دہانی کروائی تھی اس لئے متعلقہ محکمہ جات اس ضمن میں ایک ارب روپے فی الفور جاری کریں اور بقایارقم کی ریلیز کیلئے ضروری تگ ودو کریں تاکہ عوام کو اگلے سال جو ن 2020تک یہ سڑک استعمال کے لئے میسر ہو۔اس کی تعمیر سے نہ صرف ایبٹ آباد شہر پر ٹریفک کے شدیددباؤمیں کمی آئے گی بلکہ سیاحوں کیلئے ایک آسان اور بے ہنگم ہجوم سے صاف سڑک بھی گلیات جانے کیلئے میسر ہو جائے گی۔انہوں نے محکمہ خزانہ اور پی اینڈڈی کو ہدایات جاری کی کہ ایک ہفتے کے اندر اندر اس منصوبے پر کام کی رفتار کے حوالے سے رپورٹ پیش کی جائے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...