احمد شہزاد کو بال ٹمپرنگ کیس میں میچ فیس کا 50فیصد جرمانہ عائد

  احمد شہزاد کو بال ٹمپرنگ کیس میں میچ فیس کا 50فیصد جرمانہ عائد

  



لاہور(سپورٹس رپورٹر) سنٹرل پنجاب کرکٹ ٹیم کے کپتان احمد شہزاد پر میچ فیس کا 50 فیصد جرمانہ عائد کردیا گیا۔ سندھ کے سہیل خان اور سنٹرل پنجاب کے اظہر علی کو پی سی بی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے پر تنبیہ۔احمد شہزادکو میچ میں گیند کی حالت بدلنے سے متعلق پی سی بی کے ضابطہ اخلاق کے لیول 1 جرم کا مرتکب پایا گیا ہے۔گیند کی حالت تبدیل کرنے والے کھلاڑی کی شناخت نہ ہوپانے کے باعث احمد شہزاد کو نان آئیڈینٹی فکیشن کی بناء پر بطور کپتان چارج کیا گیا۔

میچ کے دوران سندھ کی پہلی اننگز میں 17ویں اوور میں آن فیلڈ امپائرز نے گیند کا معائنہ کیا تو اس میں تبدیلی دیکھی گئی

اس بناء پر آن فیلڈ امپائرز ضمیر حیدر اور محمد آصف نے احمد شہزاد کو پی سی بی کوڈ آف کنڈکٹ کے آرٹیکل 2.14 کی خلاف ورزی کرنے پر چارج کیا

میچ ریفری ندیم ارشد نے سماعت کے بعد کھلاڑی کی شناخت نہ ہوپانے کے باعث سنٹرل پنجاب کے کپتان احمد شہزاد پر جرمانہ عائد کردیا

احمد شہزاد کی جانب سے اعتراف جرم نہ کرنے کے باعث معاملے پر سماعت کی گئی

سماعت کے بعد میچ ریفری نے احمد شہزاد کو مجرم قراردے کر نوٹس آف چارج تھمادیا گیا

اس میچ کے دوران گیند کی حالت میں تبدیلی ایک فطری عمل تھا، احمد شہزاد

میچ آفیشلز کو قائل کرنے کی کوشش کی تھی کہ گیند کی حالت میں تبدیلی مصنوعی طور پر نہیں کی گئی، احمد شہزاد

میچ ریفری کے فیصلے کا احترام کرتے ہوئے اسے قبول کرتا ہوں، احمد شہزاد

کبھی ایسی کسی سرگرمی میں ملوث ہوں گا اور نہ ہی کسی ساتھی کھلاڑی کو کھیل کی ساکھ کو نقصان پہنچانے دوں گا، احمد شہزاد

میرا مقصد معیاری کرکٹ کھیلنا اور نوجوانوں کے لیے مشعل راہ بننا ہے، احمد شہزاد

سہیل خان اور اظہر علی کو میچ کے دوران جملوں کا تبادلہ کرنے پر تنبیہ جاری کردی گئی

سہیل خان کو میچ میں وقت ضائع کرنے سے متعلق پی سی بی کوڈ آف کنڈکٹ کے آرٹیکل 2.10 کے لیول 1 جرم کا مرتکب پایا گیا

اظہر علی کو کھلاڑی یا اسپورٹ اسٹاف کی سمت میں خطرناک انداز میں گیند پھینکنے سے متعلق پی سی بی کوڈ آف کنڈکٹ کے آرٹیکل 2.9 کے لیول 1 جرم کا مرتکب پایا گیا

مزید : کھیل اور کھلاڑی


loading...