پاکستان درست معاشی سمت کی طرف تیزی سے بڑھ رہا ہے: اطالوی سفیر 

      پاکستان درست معاشی سمت کی طرف تیزی سے بڑھ رہا ہے: اطالوی سفیر 

  



فیصل آباد (بیورورپورٹ) پاکستان تیزی سے درست معاشی سمت میں بڑھ رہا ہے اور اگر اس کی معیشت کو مکمل طور پر دستاویزی شکل دے دی گئی تو یہ بہت جلد دنیا کی بیس بڑی معیشتوں میں شامل ہوسکتا ہے۔ یہ بات پاکستان میں اٹلی کے سفیر سٹے فانو پوٹیکوروو نے فیصل آباد چیمبر آف کامر س اینڈانڈسٹری  میں ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر اُن کی اہلیہ لیڈیا ریویرا اور کمرشل قونصلر مسٹر رابرٹو پوڈو بھی موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی معیشت کا مجموعی حجم تقریباً 300ارب ڈالر کے لگ بھگ ہے، مگر اس میں سے 70سے 80فیصد معیشت غیر دستاویزی ہے۔ انہوں نے معیشت کو دستاویزی شکل دینے کے سلسلہ میں حکومتی کوششوں کو سراہا اور کہا کہ اس کے نتیجہ میں وقتی طور پر جی ڈی پی کی شرح میں کمی ہو سکتی ہے مگر اس کے دیر پا نتائج انتہائی مثبت ہوں گے۔ تعلیم، صحت اور بنیادی ڈھانچے کے حوالے سے اٹلی کے سفیر نے کہا کہ غیر ملکی قرضوں کے دباؤ کی وجہ سے سماجی شعبے پر اخراجات بہت کم ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ان کا ملک تعلیم پر جی ڈی پی کا ستائیس فیصد خرچ کر رہا ہے جبکہ پاکستان میں اس کی شرح صرف 2فیصد ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اٹلی میں صحت کی بہترین سہولتیں مہیا کی جا رہی ہیں جبکہ تعلیم کیلئے عالمی سطح کے تعلیمی ادارے بھی موجود ہیں۔ انہوں نے پاکستان میں معیشت کی بحالی کیلئے کئے جانے والے حالیہ اقدامات کو سراہا اور کہا کہ اس کی وجہ سے آنے والے چند سالوں میں معیشت تیزی سے ترقی کرے گی اور پاکستان کا شمار بہت جلد اس خطے میں تیزی سے ترقی کرنے والے ملکوں میں ہو گا۔ مشینوں کی تیاری اور برآمد کے حوالے سے انہوں نے بتایا کہ اٹلی دنیا کی بہترین مشینری تیار کر رہا ہے، اپنے اعلیٰ معیار کی وجہ سے اٹلی کی مشینری عام طور پر مہنگی ہوتی ہے مگر اس کے فوائد سستی مشینری سے کہیں زیادہ ہوتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اٹلی کی کئی فرمیں پاکستان میں مشینری کی تیاری کیلئے مشترکہ منصوبے شروع کرنے میں دلچسپی رکھتی ہیں اور اس سلسلہ میں ابتدائی سطح کی بات چیت جاری ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس وقت بھی اٹلی کی کئی مشینوں اور خاص طور پر گاڑیوں کے بعض انتہائی پیچیدہ پرزے پاکستان میں تیار کئے جا رہے ہیں۔ انہوں نے زرعی اشیاء کی تیاری میں بھی اٹلی کی مہارت کا ذکر کیا اور بتایا کہ اٹلی کے پنیر، دہی اور خشک دودھ کی دنیا بھر میں مانگ ہے، اس وقت ان خوردنی اشیاء کا ایک بڑا حصہ چین کو برآمد کیا جا رہا ہے۔پاکستان میں بھینسوں کی تعداد کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ ڈیری مصنوعات کی تیاری کے سلسلہ میں بھی پاکستان اور اٹلی کے درمیان مشترکہ منصوبے شروع کرنے کے وسیع امکانات ہیں، کیونکہ ان اشیاء کی فروخت میں منافع کی شرح کافی زیادہ ہے۔ انہوں نے اجلاس کے شرکاء کی طرف سے اٹھائے گئے کئی سوالوں کے جوابات بھی دیئے اور فیصل آباد چیمبر کی مہمان نوازی کا شکریہ ادا کیا۔

 اس سے قبل خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدر رانا محمد سکندر اعظم خاں نے اٹلی کے سفیر کے پاکستان میں چار سالہ قیام کو سراہا اور کہا کہ انہوں نے اس دوران دونوں ملکوں کے درمیان دو طرفہ تجارت کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ دہائی کی دہشت گردی کے بعد اب پاکستان میں مکمل امن وامان ہے جس کی وجہ سے غیر ملکی سرمایہ کاروں کیلئے یہاں منافع کمانے کے وسیع امکانات موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آپ نے بطور اٹلی کے سفیر پاکستان کی موجودہ سیاحتی خوبصورتی‘پر امن ماحول اور اس ملک کے لوگوں کی مہمان نوازی کا بذات خود لطف اٹھایا ہے۔ اب آپ کو چاہیے کہ آپ وطن واپسی پر اپنے سفارتی حلقوں اور خاص طورپر اٹلی کی عوام کو پاکستان کے بارے اصل صورتحال اور حقائق سے آگاہ کریں تاکہ پاکستان کے خلاف منفی پراپیگنڈا کا ازالہ کیا جا سکے۔ اس سے قبل فیصل آباد اور فیصل آباد چیمبر کے بارے میں ایک دستاویزی فلم دکھائی گئی جبکہ سوال و جواب کی بھی طویل نشست ہوئی۔ آخر میں سینئر نائب صدر ظفر اقبال سرور نے مہمانوں کا شکریہ ادا کیا جبکہ پارکس اینڈ ہارٹیکلچر اتھارٹی کے چیئرمین ایم پی اے لطیف نذر نے اٹلی کے سفیر کو فیصل آباد چیمبر کی اعزازی شیلڈ پیش کی۔

مزید : کامرس


loading...