سانحہ تیز گام کو تحقیقات سے پہلے سلنڈر دھماکہ قراردینامعنی خیز 

 سانحہ تیز گام کو تحقیقات سے پہلے سلنڈر دھماکہ قراردینامعنی خیز 

  



لاہور(تجزیہ:یو نس باٹھ) تیزگام ایکسپریس میں پیش آنے والا حادثہ انتہائی افسوسناک ہے،جس میں درجنوں افراد زندہ جل گئے اور متعدد زخمی ہوئے، کراچی سے راولپنڈی جانے والی ٹرین میں سوار زیادہ تر مسافروں کا تعلق تبلیغی جماعت سے تھا جو رائے ونڈ اجتماع میں شرکت کیلئے جا رہے تھے۔وفاقی وزیر اور ریلوے حکام کی جانب سے واقعہ کے فوری بعد اسے سلنڈر دھماکے کا شاخسانہ قراردینا انتہائی معنی خیز تھا،سانحہ میں بچ جانے والے مسافروں کا موقف تھا کہ سلنڈرسے گیس نکال دی گئی تھی۔ذرائع کے مطابق آگ لگنے کا آغاز ائرکنڈیشنڈ سلیپر سے ہوا جبکہ متاثرہ مسافر اکانومی کلاس میں تھے لہٰذاآگ وہیں سے شروع ہونی چاہئے تھی۔ مسافروں کا کہنا ہے کہ زنجیر کھینچ کر ٹرین روکنے کی کوشش کی لیکن کوئی زنجیر کام نہیں کر رہی تھی چنانچہ ٹرین چلتی رہی اور آگ پھیلتی گئی اور کیا زنجیروں کا کام نہ کرنا بھی سلنڈروں کی وجہ سے تھا؟،سانحہ کے حوالے سے بعض ماہرین کا کہنا ہے کہ آگ شارٹ سرکٹ سے لگی ہے مگر یہ بات ریلوے کے ذمہ داران ہر گز تسلیم نہیں کریں گے۔

معنی خیز

مزید : صفحہ آخر


loading...