مقبوضہ کشمیر میں 90ویں روز بھی زندگی قید، بھارتی بربریت پر عالمی برادری خاموش

  مقبوضہ کشمیر میں 90ویں روز بھی زندگی قید، بھارتی بربریت پر عالمی برادری ...

  



سرینگر/نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) مقبوضہ کشمیر میں کرفیو اور لاک ڈاؤن کا90 واں روز ہے،پانچ اگست سے کرفیو اور لاک ڈاؤن جاری، دکانیں اورکاروباری مراکز بند ہے۔بھارتی بربریت پر عالمی برادری کی خاموشی اورمقبوضہ کشمیر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے پر وادی میں بھارت کے خلاف سخت غم و غصہ پایا جاتا ہے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق اکتوبرمیں بھارتی فوج نے 10 نوجوانوں کو شہید کیا،پیلٹ گن کی ظالمانہ کارروائیوں میں 57 افراد شدید زخمی کر دیئے، 67 افراد کو حراست میں لیا گیا۔ بھارتی فوج نے 30 خواتین کو زدو کوب اور تین گھروں کو مسمار کیا۔دوسری جانب بھارتی حکومت نے آزاد کشمیر کی سرحد سے متصل علاقے اور کارگل کے قریب لداخ میں رواں ہفتے 2نئے ریڈیو سٹیشن قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔سرکاری ذرائع نے بین الاقوامی خبر رساں ادارے کو بتایا کہ دو نئے ریڈیو سٹیشن آزاد کشمیر کی سرحد سے متصل کشمیر اور کارگل سے کچھ  فاصلے پر ہیمبوٹنگنگلہ لداخ میں قائم کیا جائے گا۔ دونوں مقامات کو ان کی سٹریٹجک اہمیت کیلئے منتخب کیا گیا ہے اور دونوں یونین ٹیریٹری میں مقامی آبادی تک حکومتی رسائی کیلئے یہ اہم کردار ادا کریں گے۔ 13ہزار فٹ سے بلندی پر واقع ہیمبوٹنگنگلہ، آل انڈیا ریڈیو کا بلند ترین ایف ایم سٹیشن ہوگا۔ وسیع تر کوریج کو یقینی بنانے کیلئے پہاڑی علاقوں کے اندر بھی ایف ایم ٹرانسمیٹر نصب کئے گئے ہیں،جن میں پیٹنائٹپ، نوشہرہ، ادھم پور، ریاسی، پونچھ اور بھدروا کے علاقے شامل ہیں ہیں۔ جموں اور سری نگر میں پبلک براڈکاسٹنگ کے ادارے موجودہ سیٹ اپ کے علاوہ ہیں۔

مقبوضہ کشمیر 

مزید : صفحہ اول


loading...