بلدیاتی نظام اور جسقم کے کارکن کی ہلاکت کیخلاف نوابشاہ میں شٹرڈاﺅن ہڑتال ، پولیس اور مظاہرین میں جھڑپیں

بلدیاتی نظام اور جسقم کے کارکن کی ہلاکت کیخلاف نوابشاہ میں شٹرڈاﺅن ہڑتال ، ...
بلدیاتی نظام اور جسقم کے کارکن کی ہلاکت کیخلاف نوابشاہ میں شٹرڈاﺅن ہڑتال ، پولیس اور مظاہرین میں جھڑپیں

  

حیدرآباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سندھ کے مختلف شہرو ں میں نئے بلدیاتی نظام کے خلاف مظاہروں کے دوران دو پولیس اہلکاروں سمیت چار افراد زخمی ہوگئے جبکہ مظاہرین نے نجی املاک کو بھی نقصان پہنچایا۔ نواب شاہ میں ایک کار اور 5 موٹر سائیکلیں جلادی گئیں اور 2 پولیس اہل کاروں سمیت 4 افراد زخمی ہوئے۔ مظاہرین نے پیپلز پارٹی کے رہنماﺅں کے گھروں پر توے اور چوڑیاں لٹکائیں۔ سندھ بچاﺅ کمیٹی کی اپیل پر نئے بلدیاتی نظام کیخلاف نواب شاہ میں ہڑتال ہوئی جس میں مختلف مقامات پر قوم پرست کارکن سڑکوں پر آگئے ۔ غریب آباد، سکرنڈ روڈ ، ہسپتال روڈ اور پریس کلب روڈ پر مظاہرین اور پولیس میں جھڑپیں ہوئیں۔ سکرنڈ روڈ پر مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپ میں 2 پولیس اہلکاروں سمیت 4 افراد زخمی ہوگئے۔ شرپسندوں نے سکرنڈ روڈ پر کھڑی کار کو آگ لگادی۔ ائر پورٹ تھانے میں کھڑی پانچ موٹر سائیکلیں بھی جلادی گئیں۔ ٹنڈو محمد خان میں قوم پرست تنظیموں کے کارکنوں نے پیپلزپارٹی کے ضلعی صدر کے گھر پر توے ٹانگ کر انڈوں سے نشانہ بازی کی۔ کندھ کوٹ میں صوبائی وزیرمظفر شجرا کے گھر پر چوڑیاں لٹکادی گئیں۔ حیدرآباد میں سول سوسائٹی نے بھوک ہڑتالی کیمپ لگایا۔ اس مو قع پر سندھ ترقی پسند پارٹی کے چئیرمین ڈاکٹر قادر مگسی بھی کیمپ میں آئے۔ شہداد کوٹ میں نامعلوم افراد نے پوسٹ آفس کے باہر کھڑی محکمہ ڈاک کی گاڑی کو آگ لگادی۔ جیکب آباد میں جئے سندھ قومی محاذ کے تحت مظاہرہ کیا گیا۔ نوشہرو فیروز میں وکلا نے عدالتی امور کا بائیکاٹ کیا۔ نئے بلدیاتی نظام کے خلاف خیر پور ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن نے پیپلز پارٹی کے رکن سندھ اسمبلی پیر محمد بچل شاہ جیلانی ایڈووکیٹ کی بار کی رکنیت معطل کردی۔ بچل شاہ اور وزیراعلٰی سندھ کے بار میں داخلے پر پابندی بھی لگادی گئی ہے۔

مزید :

قومی -