ریپ کا شکار ہونے والی ایرانی خاتون کو پھانسی دینے کی تیاریاں مکمل، چند دن کے لئے زندگی ’بخش‘دی گئی

ریپ کا شکار ہونے والی ایرانی خاتون کو پھانسی دینے کی تیاریاں مکمل، چند دن کے ...
ریپ کا شکار ہونے والی ایرانی خاتون کو پھانسی دینے کی تیاریاں مکمل، چند دن کے لئے زندگی ’بخش‘دی گئی

  

تہران (مانیٹرنگ ڈیسک) ایران میں عزت پر حملہ کرنے والے کو قتل کرنے والی نوجوان خاتون کی پھانسی کو آخری وقت پر 10 دن کیلئے ملتوی کردیا گیا ہے۔ چھبیس سالہ ریحانہ جباری پر الزام تھا کہ اس نے ایران کی وزارت انٹیلی جنس کے سابقہ ملازم مرتضی سربندی کو قتل کیا تھا اور عدالت نے 2009ءمیں اسے پھانسی کی سزا سنائی تھی۔ سات سال کی قید کے بعد اسے پھانسی پر لٹکایا جانے والا تھا کہ یہ فیصلہ عارضی طور پر ملتوی کردیا گیا۔ خاتون کا موقف تھا کہ مقتول نے اسے نوکری کے بہانے گھر بلایا اور پھر اس کی عصمت دری کی کوشش کی جس پر اس نے عزت بچانے کیلئے اسے قتل کردیا۔ انسانی حقوق کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے مقدمے کی کارروائی میں گہرے اور شدید نقائص کی نشاندہی کی تھی اور ایسی اطلاعات بھی سامنے آچکی ہیں کہ ملزمہ سے خوفناک تشدد کے ذریعے مرضی کے بیان دلوائے گئے۔ جیل حکام نے ریحانہ کی والدہ کو اطلاع دی تھی کہ وہ اگلی صبح جیل پہنچ کر اپنی بیٹی کی میت وصول کرلے جبکہ اس نے خود بھی اپنی والدہ کو الوداعی کال کرکے خدا حافظ کہہ دیا تھا۔ انسانی حقوق کے اداروں کا کہنا ہے کہ پھانسی کا ملتوی ہونا اچھی خبر ہے لیکن یہ التواءصرف 10 دن کیلئے ہے اور مقتول کے ورثاءکے معاف نہ کرنے کی صورت میں اسے دس دن بعد پھانسی دی جاسکتی ہے۔

مزید :

جرم و انصاف -