’موٹی انگلی ‘کی غلطی نے ٹوکیو سٹاک ایکسچینج میں سب کی نیندیں اڑا دیں

’موٹی انگلی ‘کی غلطی نے ٹوکیو سٹاک ایکسچینج میں سب کی نیندیں اڑا دیں
’موٹی انگلی ‘کی غلطی نے ٹوکیو سٹاک ایکسچینج میں سب کی نیندیں اڑا دیں

  

 ٹوکیو(نیوز ڈیسک) جاپان میں ’موٹی انگلی‘ والے ایک مینیجنگ ڈائریکٹر کی وجہ سے حصص کے کاروبار کو 380ارب پاو¿نڈ (تقریباً 36ہزار ارب پاکستانی روپے ) کا دھچکا لگ گیا جو کہ سویڈن جیسے ملک کی مجموعی معیشت سے بھی زیادہ ہے۔ دراصل ’موٹی انگلی‘ مالی شعبے میں ایسی غلطی کی طرف اشارہ ہے جو ٹائپنگ کرتے ہوئے مطلوبہ Key کے ساتھ والی Key بھی دب جانے سے ہوتی ہے۔ جاپان کی بڑی بڑی کمپنیوں کے حصص کا کاروبار ہانگ کانگ کی ایک کپمنی کے زیر انتظام تھا اور اس کے ایم ڈی گیون پیری سے کمپیوٹر میں ڈیٹا داخل کرتے وقت یہ غلطی ہو گئی جس کے باعث مشہور کمپنیوں کے اربوں ڈالر کے حصص کا آرڈر کینسل ہو گیا۔ متاثرہ کمپنیوں میں ہونڈا ، کینن اور سونی جیسی بین الاقوامی شہرت یافتہ کمپنیاں شامل ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -