پولیس کی بروقت کاروائیوں نے عوام کو دہشتگردی کے کئی واقعات سے محفوظ رکھا :پرویز رشید

پولیس کی بروقت کاروائیوں نے عوام کو دہشتگردی کے کئی واقعات سے محفوظ رکھا ...

  

 اسلام آباد(صباح نیوز) وفاقی وزیر اطلاعات سینیٹر پرویز رشید نے کہا ہے کہ پولیس نے ملک میں امن و امن کے لیے بے شمار قربانیاں دی ہیں پولیس کی قربانیوں کا بھی ذکر ہونا چاہیے شہید پولیس افسران اور جوانوں کو خراج عقیدت پیش کیا جانا چاہیے پولیس کی بروقت کاروائیوں سے عوام بہت سے دہشتگردی کے واقعات سے محفوظ رہے ۔پنجاب پولیس کے میڈیا افسران کی تربیتی ورکشاپ کی اختتامی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ پولیس کی بروقت کاروائیوں سے عوام بہت سے دہشتگرد واقعات سے محفوظ رہے ،پولیس کے میڈیا افسران اپنے ادارے کا چہرہ ہیں پولیس میڈیا افسران کی بہتر کارکردگی سے ادارے کی ساکھ بہتر ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ پولیس اہلکاروں نے ایسی قربانیاں اور خدمات انجام دی ہیں جنہیں پاکستان ہمیشہ یاد رکھے گا ،پوری پوری رات جاگتے رہنا، سڑکوں پر پہرہ دیتے رہنا دہشتگردوں کی حرکات و سکنات کو روکنے کی کوشش کرنا اوران تک پہنچنا یقیناً اگر آپ پولیس والے نہ ہوتے تو دہشتگردی کے بہت سے واقعات رونما ہوتے لیکن ان تمام حقائق کو تسلیم کرتے ہوئے اس وقت یقیناً بڑا افسوس ہوتا ہے جب پولیس کا ذکر کم ہوتا ہے جتنی پولیس والے قربانیاں دیتے ہیں اتنا ہی اسے تسلیم بھی کیا جانا چاہیے جس طرح ہم اپنے شہیدوں کے نام پر سڑکوں کے نام رکھتے ہیں اسی طرح ہمیں شہید ہونے والے پولیس اہلکاروں کے ناموں سے بھی شاہراہوں اور سڑکوں کو منسوب کرنا چاہیے۔ پولیس اہلکاروں کی گفتگو کے حوالے سے میڈیا کے ذریعے جو تاثر قائم ہے اسے تبدیل ہونا چاہیے جو اچھا کام کرے اس کی حوصلہ افزائی ہونی چاہیے بلاوجہ تنقید سے اجتناب کیا جانا چاہیے،انہوں نے کہا کہ ایک کامیاب ریاست کے لیے ضروری ہے کہ وہ اپنے تمام شہریوں کے ساتھ بھی مساویانہ سلوک کرے اور اپنے اداروں کے ساتھ بھی پولیس بھی ایک اہم ادارہ ہے لہذا اس ادارے کی قربانیوں کو تسلیم کرنا اسلیے ضروری ہے کہ تا کہ اچھے نتائج حاصل کیے جا سکیں جبکہ اچھے نتائج کا فائدہ صرف اس ادارے کو ہی نہیں ہے بلکہ پورے ملک اور ہمارے مستقبل کو ہے اس لیے ضروری ہے کہ پولیس کی خدمات کو تسلیم کیا جائے اور اس لیے بھی ضروری ہے کہ لوگ پولیس کو عزت کی نظر سے دیکھیں اور پولیس کا وقار لوگوں کی نظر میں بلند ہو تا کہ پولیس میں کارکردگی کا جذبہ بلند ہو اور وہ اپنی کارکردگی مذید بہتر بنائے پولیس کو اچھا سمجھا جائے تا کہ وہ مذید اچھا بننے کی کوشش کرے ہر شعبے کی یکساں حوصلہ افزائی سے کارکردگی میں اضافہ ہوتا ہے۔انہوں نے کہا کہ اچھی تربیت کے ساتھ ساتھ اچھی گفتار کا ہونا بھی ضروری ہے اچھی گفتار سے آپ کا اخلاق اور تربیت لوگوں کے سامنے آئے گی لوگوں کے ساتھ گفتگو کا انداز ایسا ہی ہونا چاہیے جسطرح آپ کا اپنے گھر والوں سے ہوتا ہے۔

مزید :

صفحہ اول -