رُک جا ہجومِ گل کہ ابھی حوصلہ نہیں| زہرا نگاہ |

رُک جا ہجومِ گل کہ ابھی حوصلہ نہیں| زہرا نگاہ |
رُک جا ہجومِ گل کہ ابھی حوصلہ نہیں| زہرا نگاہ |

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

رُک جا ہجومِ گل کہ ابھی حوصلہ نہیں 

دل سے خیالِ تنگیِ داماں گیا نہیں 


جو کچھ ہیں سنگِ و خشت ہیں یا گردِ رہگزر 

تم تک جو آئے ان کا کوئی نقشِ پا نہیں 


ہر آستاں پہ لکھا ہے اب نامِ شہرِ یار 

وابستگانِ دل کے لئے کوئی جا نہیں 


صد حیف اس کے ہاتھ ہے ہر زخم کا رفو 

دامن میں جس کے ایک بھی تارِ وفا نہیں 

شاعرہ: زہرا  نگاہ

(شعری مجموعہ:شام کا پہلا تارا؛سالِ اشاعت،1980)

Ruk   J a   Hujoom-e-Gull   Keh   Abhi   Hosla   Nahen

Dil   Say   Khayaal-e-Tashnag-e-Damaan   Gaya   Nahen  

Jo   Kuch   Hen   Sang-o-Khisht   Hen   Ya   Gard-e-Rehguzar

Tum   Tak   Jo   Aaey   Un    Ka   Koi   Naqsh-e-Paa   Nahen

Har   Aastaan   Pe   Likha   Hay   Ab   Naam-e-Shehr-e-Yaar

Wabastagaan -e-Dil   K   Liay    Koi   Jaa   Nahen

Sad    Haif   Uss   K   Haath   Hay   Har   Zakhm   Ka   Rafoo

Daaman   Men    Jiss   K   Aik   Bhi   Taar-e-Wafaa   Nahen

Poetess: Zehra   Nigaah