یہ اُداسی یہ پھیلتے سائے | زہرا نگاہ |

یہ اُداسی یہ پھیلتے سائے | زہرا نگاہ |
یہ اُداسی یہ پھیلتے سائے | زہرا نگاہ |

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

یہ اُداسی یہ پھیلتے سائے 

ہم تجھے یاد کر کے پچھتائے 


مل گیا تھا سکوں نگاہوں کو 

کی تمنا تو اشک بھر آئے 


گل ہی اکتا گئے ہیں گلشن سے 

باغباں سے کہو نہ گھبرائے 


ہم جو پہنچے تو رہ گزر ہی نہ تھی 

تم جو آئے تو منزلیں لائے 


جو زمانے کا ساتھ دے نہ سکے 

وہ ترے آستاں سے لوٹ آئے 


بس وہی تھے متاعِ دیدہ و دل 

جتنے آنسو مژہ تلک آئے 

شاعرہ: زہر ا نگاہ

(شعری مجموعہ:شام کا پہلا تارا؛سالِ اشاعت،1980)

Yeh   Udaasi   Yeh   Phailtay   Saaey

Ham   Tujahy   Yaad    Kar   K   Pachhtaaey

Mill   Gaya   Tha   Sakoon    Nigaahon   Ko

Ki   Tamanna   To   Ashk   Bhar   Aaey

Gul   Hi   Uktaa   Gaey   Hen    Gulshan   Say

Baaghbaan   Say    Kahoi   Na   Ghabraaey

Ham   Jo   Pahunchay   To   Reguzar   Hi   Na   Thi

Tum   Jo   Aaey   To   Manzalen   Laaey

Jo   Zamaanay   Ka   Saath   Day   Na   Sakay

Wo   Tiray   Aastaan   Say   Laot   Aaey

Bass   Wahi   Thay   Mataa-e- Deeda -o- Dill

Jitnay   Aansu   Mazza   Talak   Aaey

Poet: Zehra   Nigaah