خوش جو آئے تھے پشیمان گئے  | زہرا نگاہ |

خوش جو آئے تھے پشیمان گئے  | زہرا نگاہ |
خوش جو آئے تھے پشیمان گئے  | زہرا نگاہ |

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

خوش جو آئے تھے پشیمان گئے 

اے تغافل تجھے پہچان گئے 

خوب ہے صاحب محفل کی ادا 

کوئی بولا تو برا مان گئے 


کوئی دھڑکن ہے نہ آنسو نہ خیال 

وقت کے ساتھ یہ طوفان گئے 


تیری ایک ایک ادا پہچانی 

اپنی ایک ایک خطا مان گئے 


اس کو سمجھے کہ نہ سمجھے لیکن 

گردشِ دہر تجھے جان گئے 

شاعرہ: زہرا نگاہ

(شعری مجموعہ:شام کا پہلا تارا؛سالِ اشاعت،1980)

Khush   Jo   Aaey   Thay   Pashemaan    Gaey

Ay    Taghaafull   Tujhay   Pehchaan    Gaey

Khoob   Hay   Saahib-e-Mefill   Ki    Adaa

Koi   Bola  To   Bura   Maan    Gaey

Uss   Ko    Samjhay    Keh   Na    Saamjhay   Lekin

Gardish-e-Deher    Tujhay   Jaan    Gaey

Uss    Jagah    Aql    Nay    Dhokay   Khaaey

Jiss    Jagah    Dil   Tiray   Farmaan    Gaey

Teri   Aik    Aik   Adaa   Pehchaani

Apni   Aik    Aik    Khataa   Maan    Gaey

 

Koi Dharrkan Hay  Na Aansoo Hay Na Umang

Waqt K Saath Yeh Tufaan    Gaey

Poetess: Zehra  Nigaah