ودہولڈنگ ٹیکس کے معاملے پر ہڑتال سے نقصان ہوگا: سید محمود غزنوی

ودہولڈنگ ٹیکس کے معاملے پر ہڑتال سے نقصان ہوگا: سید محمود غزنوی

لاہور(کامرس رپورٹر)لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے نائب صدر سید محمود غزنوی نے حکومت کی جانب سے بینکوں سے لین دین پر ودہولڈنگ ٹیکس کے معاملے پر لچک نہ دکھانے اور مجبوراً تاجروں کے احتجاجی اقدامات کے اعلانات پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ صورتحال بگڑنے سے بچانے کے لیے ودہولڈنگ ٹیکس کی فوری واپسی کا اعلان کرے۔ ایک بیان میں لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے نائب صدر نے کہا کہ ودہولڈنگ ٹیکس کی وجہ سے حکومت کو ہونے والے فائدے کی نسبت تاجروں کی ہڑتال سے ہونے والا نقصان کہیں زیادہ ہوگا لہذا حکومت دانشمندی سے کام لے۔ سید محمود غزنوی نے کہا کہ ودہولڈنگ ٹیکس کی وجہ سے بینک دیوالیہ پن کے راستے پر قدم رکھ چکے ہیں، اگر حکومت نے یہ معاملہ نہ نمٹایا تو صورتحال مزید خراب ہوگی لہذا حکومت بینکوں سے لین دین پر عائد ودہولڈنگ ٹیکس فوری طور پر واپس لے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اور تاجروں کے درمیان کشیدگی کی فضا کسی طرح بھی ملک کے مفاد میں نہیں ہے، اس سے نہ صرف ملک میں کاروباری ماحول خراب ہوگا بلکہ عالمی سطح پر ملک کی ساکھ بھی خراب ہوگی اور یہ تاثر ابھرے گا کہ پاکستان میں کاروباری ماحول بہتر نہیں ہے۔ سید محمود غزنوی نے کہا کہ عالمی سطح پر یہ پیغام دینا بہت ضروری ہے کہ پاکستان کاروبارکے لیے بہترین جگہ ہے مگر ودہولڈنگ ٹیکس کے معاملے پر حکومت اور تاجروں کے درمیان محاذ آرائی صورتحال خراب کررہی ہے۔ سید محمود غزنوی نے کہا کہ بینکوں سے لین دین پر ودہولڈنگ ٹیکس دراصل دوہرا ٹیکس اور ایک جبری قانون ہے جو تاجر قبول کرنے کو تیار نہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت تصادم کی صورتحال پیدا کرنے سے گریز کرے کیونکہ اس سے ملک کو ناقابلِ تلافی نقصان ہوگا، حکومت کو چاہیے کہ تاجروں سے سنجیدہ مذاکرات کرے تاکہ بینکوں سے لین دین پر ٹیکس کے معاملے پر کشیدگی کی صورتحال ختم ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت جب معیشت بحالی کی جانب جارہی ہے، تاجر برادری سے محاذ آرائی حکومت کی تمام کوششوں پر پانی پھیر دے گی۔ لاہور چیمبر کے نائب صدر نے کہا کہ تاجر بینکوں سے لین دین پر ٹیکس کو کالا قانون قرار دیتے ہوئے اسے قبول کرنے سے گریزاں ہیں لہذا بہتر یہی ہوگا کہ حکومت یہ ٹیکس واپس لے اور ٹیکس نیٹ کو وسعت دینے کے لیے دیگر اقدامات اٹھائے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ٹیکس عائد کرنے کے بعد تاجروں نے بینکوں سے سرمایہ نکلوانا شروع کردیا ہے جس کی وجہ سے بینکوں کے ٹرن اوور میں نمایاں کمی ہوئی ہے، اگر حکومت نے ودہولڈنگ ٹیکس واپس نہ لیا تو بینکنگ سیکٹر بھی تباہ ہوجائے گا۔ سید محمود غزنوی نے کہا کہ بینکوں سے لین دین پر ٹیکس کے خلاف حالیہ ہڑتال کی وجہ سے ملک کو کروڑوں روپے کا نقصان ہوا ہے ، اگر تاجروں کو مزید ہڑتال پر مجبور کیا گیا تو معیشت کو ناقابلِ تلافی نقصان ہونے کا اندیشہ ہے جو کسی طرح بھی ملکی مفاد میں نہیں۔ انہوں نے کہا کہ صورتحال کے پیش نظر ضروری ہے کہ وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار یہ ودہولڈنگ ٹیکس فوری طور پر واپس لینے کے احکامات صادر کریں۔

مزید : کامرس