ممتاز صحافی ، روزنامہ پاکستان آبزرور کے ایڈیٹر انچیف زاہد ملک انتقال کر گئے ، اسلام آباد میں سپرد خاک

ممتاز صحافی ، روزنامہ پاکستان آبزرور کے ایڈیٹر انچیف زاہد ملک انتقال کر گئے ...

 اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) ممتازصحافی ،مفکر ،سابق بیوروکریٹ،نظریہ پاکستان کونسل کے سرپرست اعلیٰ،ڈیلی پاکستان آبزرور کے ایڈیٹر انچیف زاہد ملک گزشتہ روز رضائے الہیٰ سے انتقال کرگئے ،انہیں زیروپوائنٹ کے قریب سیکٹر ایچ ایٹ کے قبرستان میں سینکڑوں مداحوں،رفقا،عزیز و اقارب کی موجودگی میں سپردخاک کردیا گیا۔ نماز جنازہ میں وزیراطلاعات سینیٹر پرویز رشید،سینٹ میں قائد ایوان راجہ ظفرالحق ،ممتاز ایٹمی سائنسدان ڈاکٹر عبدالقدیر خان،مشیر خارجہ سرتاج عزیز،وزیراعظم کے مشیر عرفان صدیقی،ممتاز دانشور وچیف ایڈیٹر روزنامہ پاکستان مجیب الرحمن شامی،اے پی این ایس کے صدر سرمد علی ،سیکرٹری جنرل عمر مجیب شامی،سابق چیئرمین سینٹ وسیم سجاد،پی آئی او راؤ تحسین،سیکرٹری اطلاعات خیبرپختونخواہ طاہر حسن،سابق سیکرٹری اطلاعات انور محمود و چوہدری رشیداحمد،وزیراعظم کے سابق پریس سیکرٹری رائے ریاض احمد،ممتازقانون دان اکرم شیخ،ڈاکٹر شعیب سڈل،سینیٹر جنرل(ر)عبدالقیوم،سابق آئی جی ذوالفقار چیمہ،سابق ڈپٹی سپیکر حاجی نواز کھوکھر،،ظفرعلی شاہ ،سابق چیف جسٹس افتخار چوہدری ،ممتاز صحافی ضیا الدین،چیف ایڈیٹر روزنامہ اوصاف مہتاب خان،سابق سیکرٹری الیکشن کمیشن کنور محمد دلشاد،سینئر صحافی حضرات سعود ساحر،عبدالودود قریشی،حافظ طاہر خلیل،محسن رضا،پشاو ر سے ہارون شاہ وطاہر فاروق،روزنامہ پاکستان کے ریذیڈنٹ ایڈیٹر سہیل چوہدری،طاہر مغل،ایم کام کے سربراہ سہیل کسیٹ،ارم چوہدری سمیت ممتاز سیاسی ،سماجی ،صحافتی،سفارتی،سرکاری شخصیات سمیت ہر مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی ۔زاہد ملک 5اکتوبر 1937کو پیدا ہوئے انہوں نے اپنے کیئرئیر کا آغاز ایک بیوروکریٹ کے طور پر کیااور وزارت اطلاعات سے جوائنٹ سیکرٹری کے عہدہ سے ریٹائرڈ ہوئے۔ انہوں نے 1960میں ماس کمیونیکیشن میں ایم اے کیا اور ریٹائرمنٹ کے بعد1978میں ذاتی پبلشنگ ہاؤس بنایا،وہ ایک درجن کتابوں اور دوہزار آرٹیکلز کے مصنف تھے ۔انہوں نے صحافی اور مفکر کے طور پر ایک متحرک زندگی گزاری،پاکستان چائنا اور پاکستان ہندوستان تعلقات کے حوالے سے وہ ماہر گردانے جاتے تھے ۔انہوں نے 1971ء میں پبلک ریلیشنز کی اپنی پہلی تصنیف پر رائٹرز گلڈ آف پاکستان کا پہلا انعام حاصل کیا،جبکہ قرآن مجید پر بھی انہوں نے 800صفحات پر مشتمل مضامین قرآن حکیم لکھے،جن کا انگریزی،فرانسیسی اور جرمن زبانوں میں بھی ترجمہ کیا گیا۔2013ء میں دادا بھائی انسٹی ٹیوٹ آف ہائیر ایجوکیشن کراچی نے انہیں پی ایچ ڈی کی اعزازی ڈگری سے بھی نوازا تھا ۔دریں اثناء صدرمملکت ممنون حسین اوروزیراعظم پاکستان محمد نواز شریف نے انکے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کااظہارکیااورکہاکہ زاہد ملک کی صحافتی خدمات ہمیشہ یاد رکھی جائیں گی،وزیراعظم کے مشیر عرفان صدیقی نے کہا کہ زاہد ملک ایک سچے پاکستانی تھے اور نظریہ پاکستان پر محبت اور یقین رکھنے والے کے طور پر گردانے جاتے تھے، اس موقع پر روزنامہ پاکستان کے چیف ایڈیٹرمجیب الرحمان شامی نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ زاہد ملک نہایت نفیس اور جمہوریت پر یقین رکھنے والے شخص تھے انہوں نے کئی عشرے صحافت کی خدمت کی ،زاہد ملک دوستوں کے دوست اور دشمنوں کے بھی دوست تھے وہ بامقصد صحافت پر یقین رکھتے تھے ان کا خلاء کبھی بھی پورا نہیں ہو سکتا ۔

مزید : صفحہ اول


loading...