حکومت سندھ سے مذاکرات ، جے یو آئی نے دھرنا ختم کر دیا

حکومت سندھ سے مذاکرات ، جے یو آئی نے دھرنا ختم کر دیا

کراچی (اسٹاف رپورٹر)کراچی میں جمعیت علمائے اسلام(ف)اور حکومت سندھ کے وفد کے درمیان مذاکرات کامیاب ہوگئے ہیں، جس کے بعد جمعیت علمائے اسلام کے رہنما راشد سومرو کی جانب سے دھرنا ختم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔تفصیلات کے مطابق جمعیت علمائے اسلام(ف)کی جانب سے جمعرات کو مقتول رہنما خالد محمود سومرو کے قتل کیس کو فوجی عدالت نہ بھیجنے کے خلاف ریلی نکالی گئی ۔ ریلی کے شرکا نمائش چورنگی پر جمع ہوئے جہاں سے انہوں نے وزیر اعلی ہاؤس کی جانب مارچ شروع کیا تاہم پولیس کی جانب سے انہیں روکنے پر ریلی کے شرکا نے تبت سینٹر پر ہی دھرنا دے دیا۔دھرنے کے باعث ایم سے جناح روڈ ہر قسم کی آمدورفت کے لیے بند ہوگئی جب کہ گرومندر، صدر، سولجربازار، گارڈن اور اولڈ سٹی ایریا میں بدترین ٹریفک جام کی وجہ سے گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئیں جس کی وجہ سے عوام کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ۔تبت سینٹر پر دھرنا دیئے ہوئے جمعیت علماء اسلام کے رہنماؤں سے حکومتی وفد نے ملاقات کی ۔وفد میں صوبائی وزیر ناصر شاہ، مشیر قانون مرتضی وہاب اور ڈاکٹر قیوم سومرو شامل تھے ۔جمعیت علماء اسلام نے حکومتی وفد کو اپنے مطالبہ سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ علامہ خالد محمود سومرو کے قتل کا مقدمہ فوجی عدالت میں بھیجا جائے ۔جے یو آئی کے رہنما خالد محمود سومرو کو دو سال قبل سکھر میں قتل کردیا گیا تھا ۔حکومتی وفد نے جے یو آئی کے رہنماؤں کو حکومت سے آگاہ کیا اور یقین دہانی کرائی کہ مقتول خالد محمود سومرو قتل کیس کو فوجی عدالت میں بھیجنے کے لئے سمری بھی منظور کرلی گئی ہے ۔حکومتی مذاکراتی وفد میں شامل مشیر وزیر اعلی سندھ مرتضی وہاب نے کہا کہ مولاناخالد سومرو کے قاتلوں کی گرفتاری کے لیے ہرممکن اقدامات کیے جائیں گے جبکہ سندھ میں مدارس کی رجسٹریشن سے متعلق جے یو آئی کو اعتماد میں لیں گے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...