مردان میں ضلع کچہری کے گیٹ پر دھماکے، وکلا اور پولیس اہلکاروں سمیت13شہید ،60زخمی

مردان میں ضلع کچہری کے گیٹ پر دھماکے، وکلا اور پولیس اہلکاروں سمیت13شہید ...
مردان میں ضلع کچہری کے گیٹ پر دھماکے، وکلا اور پولیس اہلکاروں سمیت13شہید ،60زخمی

  


مردان (مانیٹرنگ ڈیسک )خیبر پختونخوا میں ایک ہی روز میں دوسری بڑی کارروائی کردی گئی۔پشاور سے 32کلومیر دور خیبرایجنسی کے علاقہ میں واقع ورسک ڈیم سے ملحقہ کرسچن کالونی میں علیٰ الصبح دہشتگردوں کے حملے کے بعد مردان میں ضلع کچہری میں  بم دھماکے کردیئے گئے۔مردان میں ضلع کچہری میں یکے بعد دیگرے دو بم دھماکے ہوئے ہیں جس میں2پولیس اہلکاروں سمیت13افراد شہید جبکہ60 زخمی ہو گئے،ہلاک ہونے والوں میں 8وکلا بھی شامل ہیں۔زخمیوں میں سے 7کی حالت نازک ہے۔دھماکے کے بعد سکیورٹی اور امدادی اہلکاروں کی بڑی تعداد جائے وقوعہ پر پہنچ چکے ہیں۔دھماکوں کی آواز دور دور تک سنی گئی۔

کرسچن کالونی میں حملہ کرنے والوں کے ہینڈلر کہاں سے رابطہ میں تھے؟تفصیلات جاننے کیلئے یہاں کلک ީریں

نجی ٹی وی کے مطابق دھماکہ کی جگہ مقامی پولیس کے افسران و اہلکاروں کاایک اجلاس جاری تھا جس کو نشانہ بنایا گیا۔دہشت گرد نے پہلے دستی بم حملہ کیا جبکہ اس کے بعد خودکش حملہ آور نے خود کو اڑا لیا۔جبکہ ایک مقامی شخص کے مطابق حملہ آوروں نے فائرنگ بھی کی۔اطلاعات کے مطابق جب دھماکے کئے گئے تو کچہری میں بہت زیادہ رش تھا۔واقعہ میں  60افراد جن میں پولیس اہلکاراور وکلا  بھی شامل ہیں شدید زخمی ہو ئے ہیں۔جنہیں ڈسٹرکٹ ہسپتال مردان  میں منتقل کر دیا گیا ہے۔نجی ٹی وی کے مطابق  ہلاکتوں میں اضافہ کا بھی خدشہ ہے ۔ریسکیو آفیسر حارث حبیب نے  ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے جن کی لاشیں ہسپتال منتقل کردی گئی ہیں۔کے پی کے حکومت کے ترجمان شوکت یوسفزئی نے 12ہلاکتوں کی تصدیق کردی ہے۔

خیال رہے کہ خیبر ایجنسی میں ورسک ڈیم سے ملحق کرسچن کالونی میں ہونے والے دہشت گرد حملے میں دوافراد شہید جبکہ تمام چاروں دہشتگردوں کو ہلاک کردیا گیا۔

مزید : مردان /اہم خبریں


loading...