پاکستان مخالف ویب سائٹس بند کرنا عدالتوں کا نہیں بلکہ پارلیمنٹ کا کام ہے:چیف جسٹس ہائی کورٹ

پاکستان مخالف ویب سائٹس بند کرنا عدالتوں کا نہیں بلکہ پارلیمنٹ کا کام ہے:چیف ...
پاکستان مخالف ویب سائٹس بند کرنا عدالتوں کا نہیں بلکہ پارلیمنٹ کا کام ہے:چیف جسٹس ہائی کورٹ

  


لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے قرار دیا ہے کہ پاکستان کے خلاف پراپیگنڈہ کرنے والی ویب سائٹس بند کرنے جیسے معاملات پر فیصلے کرنا عدالتوں نہیں بلکہ پارلیمنٹ کی ذمہ داری ہے، شہریوں کو ایسے معاملات پر اپنے منتخب نمائندوں سے رجوع کرنا چاہیے،چیف جسٹس سید منصور علی شاہ نے یہ ریمارکس عبدالحمید نامی شہری کی درخواست نمٹاتے ہوئے دیئے، درخواست گزار کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا تھاکہ بھارتی ویب سائٹ انڈیا ٹوڈے اور رسالے پر پاکستان مخالف مواد درج ہے جس کے ذریعے نوجوان نسل کے ذہنوں میں زہر انڈیلنے کی سازش کی جا رہی ہے جو کہ سائبر اور ملکی قوانین کی سنگین خلاف ورزی ہے۔انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ ملک مخالف ویب سائٹ اور رسالے کی پاکستان میں اشاعت پر پابندی عائد کی جائے، عدالت نے درخواست نمٹاتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ پاکستان میں ویب سائٹ بند کرنے سے کیا مسئلہ حل ہو جائے گا؟ ہمارے آنکھیں بند کرنے سے کوئی فرق نہیں پڑے گا، دنیا تو اس ویب سائٹ پر مواد دیکھتی رہے گی، عدالت نے مزید ریمارکس دیئے کہ ویب سائٹس بند کرنے جیسے معاملات پر فیصلے کرنا عدالتوں کانہیں بلکہ پارلیمنٹ کاکام ہے،شہریوں کو ایسے معاملات پر اپنے منتخب نمائندوں سے رجوع کرنا چاہیے۔

مزید : لاہور


loading...