سلامتی کونسل کے کام میں فوری اصلاح کی ضرورت ہے: اقوام متحدہ میں مستقل مندوب منیر اکرم

سلامتی کونسل کے کام میں فوری اصلاح کی ضرورت ہے: اقوام متحدہ میں مستقل مندوب ...
سلامتی کونسل کے کام میں فوری اصلاح کی ضرورت ہے: اقوام متحدہ میں مستقل مندوب منیر اکرم

  

نیویارک(آئی این پی) اقوام متحدہ میں مستقل مندوب اور سفیر منیر اکرم  نے کہاہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے کام میں فوری اصلاح کی ضرورت ہے،کونسل نے دہشت گردی پسند انتہا پسندی اور فاشسٹ تنظیم کو نظرانداز کرتے ہوئے القاعدہ اور آئی ایس آئی ایس کا مقابلہ کرنے پر توجہ دی ہے، سلامتی کونسل انتہا پسندوں اور فاشسٹ ہندوتوا گروپوں کی طرف سے مسلمانوں پر  ہونے والی دہشت گردی کو نظرانداز کر رہی  ہے۔

اقوام متحدہ میں مستقل مندوب اور سفیر منیر اکرم  نے سلامتی کونسل کی سالانہ رپورٹ سے متعلق  غیر رسمی اجلاس میں شرکت کی۔ انہوں نے کہا کہ سلامتی کونسل کے کام میں فوری اصلاح کی ضرورت ہے،کونسل نے دہشت گردی پسند انتہا پسندی اور فاشسٹ تنظیم کو نظرانداز کرتے ہوئے القاعدہ اور آئی ایس آئی ایس کا مقابلہ کرنے پر توجہ دی ہے۔سفیر منیر اکرم کا کہنا تھا کہ سلامتی کونسل انتہا پسندوں اور فاشسٹ ہندوتوا گروپوں کی طرف سے مسلمانوں پر  ہونے والی دہشت گردی کو نظرانداز کر رہا ہے۔گذشتہ سال کے دوران، کونسل نے جموں و کشمیر کے معاملے پر تین بار ملاقات کی ہے۔ ملاقاتوں میں 5 اگست 2019 کی بھارتی کارروائی کی غیر قانونی ہونے کی تصدیق ہوئی ہے، اس علاقے کی متنازعہ حیثیت کی تصدیق کی گئی ہے، اور سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق تنازعہ کے پرامن حل کے لئے ضروری بات پر زور دیا گیا ہے۔   منیر اکرم نے کہا کہ سلامتی کونسل کی قرارداد پر عمل درآمد عام طور پر متعدد عالمی خطوں میں نہیں ہوتا ہے جبکہ پابندیوں کی کمیٹیوں میں زیادہ شفافیت کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ کونسل کو مسئلہ کشمیر کو حل کرنا چاہئے تاکہ کونسل کی ساکھ سے سمجھوتہ  نہ ہو جب اس کی قراردادوں پر عمل درآمد نہیں ہوتا۔ 70 سال سے زیادہ عرصہ تک، بھارت 900،000 فوجیوں کے ساتھ مقبوضہ علاقے میں دہشت گردی کا راج رہا ہے۔ 8 ملین کشمیر کو مکمل محاصرے میں رکھا گیا ہے۔ "بی جے پی-آر ایس ایس کی حکومت اپنے مقبوضہ کشمیر میں " حتمی حل "کہلانے والی جگہ پر قائم ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں آباد طبقوں کے ذریعہ آبادیاتی سیلاب کا مقصد کشمیری عوام کی آزادی اور ان کے آزادانہ حق رائے دہی سے آزاد ہونا اور ان کی مسلم شناخت کو ختم کرنا ہے۔ منیر اکرم  کا مزید کہنا تھا کہ تب تک  بین الاقوامی برادری تنازعات کی روک تھام کو مستحکم کرنے اور تنازعات کے پر امن حل کو فروغ دینے کی اپنی کوششوں میں کامیاب نہیں ہوسکتی ہے جب تک  اس کی اپنی قراردادیں جان بوجھ کر کچھ لوگوں کے ہاتھوں نظرانداز نہ کر وائی جائیں۔ 

مزید :

قومی -