بلوچستان میں نامیاتی کپاس اور زیتون کی پیداوار بڑھائی جائے، فخر امام  

بلوچستان میں نامیاتی کپاس اور زیتون کی پیداوار بڑھائی جائے، فخر امام  

  

 اسلام آباد (آن لائن) وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ و تحقیق سید فخر امام نے کہا ہے کہ زراعت سی پیک کے 7 اہم حصوں میں سے ایک ہے۔گزشتہ روز یہاں جنوبی بلوچستان کے علاقوں واشک، خاران، پنجگور، کچ، لسبیلہ، آواران، خضدار اور گوادر کی ترقی سے متعلق مشاورتی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے سید فخر امام نے کہا کہ ہمیں سائنسی طور پر زرعی معاشی نظام کی اصلاح کی ضرورت ہے۔ بلوچستان مویشیوں کے لئے بڑے پیمانے پر زمینیں برقرار رکھ سکتا ہے۔ سمندری ماہی گیری بلوچستان زرعی معیشت کے لئے اہم ثابت ہوسکتی ہے۔ فصلوں کی ویلیو ایڈیشن کے لئے بلوچستان سر فہرست ہوسکتا ہے۔اجلاس میں بتایا گیا کہ واشک، خضدار اور لسبیلہ میں، لو ڈیلٹا فصلوں کی کاشت کی جا سکتی ہے۔بلوچستان میں نامیاتی کپاس کو فروغ دینا طویل مدتی حکمت عملی ہے۔ خضدار، خاران اور آواران میں زیتون کی روایتی فصلوں کو اپ گریڈکیا جائے۔اسی طرح، گوادر اور لسبیلہ میں، کیج کلچر کے ذریعہ فش فارمنگ کی جانی چاہئے۔

 فخر امام  

مزید :

پشاورصفحہ آخر -