وہاڑی: سڑکوں کی تعمیر و مرمت کاغذی نکلی‘ فنڈز ہضم کرنیکا انکشاف 

  وہاڑی: سڑکوں کی تعمیر و مرمت کاغذی نکلی‘ فنڈز ہضم کرنیکا انکشاف 

  

وہاڑی(بیورورپورٹ،نامہ نگار) محکمہ شاہرات وہاڑی کے ایکسیئن کی مبینہ آشیر باد سے سڑکوں کی تعمیر و مرمت کے نام پر کروڑوں روپے کے فنڈز ڈکار لئے گئے جبکہ اربوں روپے مالیت کی سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگئیں۔ تفصیل کے مطابق ضلع وہاڑی میں ملتان روڈ، میلسی بہاولپور روڈ، خانیوال روڈ چیچہ وطنی روڈ،بوریوالہ روڈ حاصل پور روڈ، عارفوالہ روڈ،میانچنوں روڈ اور دیگر ضلعی و تحصیل کی رابطہ سڑکیں حکومت پنجاب کے اربوں روپے کے فنڈز سے تباہ کی گئیں (بقیہ نمبر26صفحہ6پر)

اور ان کی کنٹیجنسی کی مد میں بھی کروڑوں روپے فنڈز رکھے گئے لیکن افسران نے مبینہ طور پر فرضی بل بنا کر فنڈز  جون 2020سے قبل ہی نکلوا لئے اور سڑکوں کو بے یارومددگار چھوڑدیا بارشوں اور اوورلوڈنگ کی وجہ سے سڑکیں اپنی معیاد سے پہلے ہی ٹوٹ پھوٹ رہی ہیں اور کئی سڑکوں میں گڑھے پڑ چکے ہیں جس سے ٹریفک کی روانی بری طرح متاثر ہو رہی ہے حیران کن بات یہ ہے کہ محکمہ ہائی وے کا فیلڈ سٹاف سڑکوں کی دیکھ بھال کی جانب معمولی سی بھی توجہ دینے کیلئے تیار نہیں سڑکوں کے کناروں پر جمع ہونے والا پانی سڑکوں کی تباہی کا باعث بنتا ہے لیکن فیلڈ سٹاف  اور افسران گھروں میں بیٹھ کر تنخواہیں وصول کر رہے ہیں ایکسیئن بھی کئی کئی روز دفتر نہیں ہوتے جس کی وجہ سے تمام محکمانہ امور ٹھپ ہو چکے ہیں اس حوالے سے جب ایکسیئن سے رابطہ کیاگیا تو انہوں نے ملنے سے انکار کر دیا اربوں روپے کی سڑکوں کی بربادی پر شہریوں اور سو ل سوسائٹی سے وابستہ افراد ایم سرور چوہدری،صہیب نجف جعفری،چوہدری جمیل سندھو ایڈووکیٹ، علی عمران ایڈووکیٹ،میاں جہانزیب ایڈووکیٹ، عبدالرشید چوہدری و دیگر نے گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے سیکرٹری مواصلات پنجاب سے محکمہ ہائی وئے کے فنڈز کا خصوصی آڈٹ کرانے اور محکمانہ امور میں غفلت و لاپرواہی پرتنے پر افسران کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا ہے۔وہاڑی(نامہ نگار) محکمہ شاہرات وہاڑی کے ایکسیئن کی مبینہ آشیر باد سے سڑکوں کی تعمیر و مرمت کے نام پر کروڑوں روپے کے فنڈز ڈکار لئے گئے جبکہ اربوں روپے مالیت کی سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار  فیلڈ سٹاف اوور سیرز ایس ڈی او ز بھی گھروں میں بیٹھ کر تنخواہیں وصول کرنے لگے تفصیل کے مطابق ضلع وہاڑی میں ملتان روڈ، میلسی بہاولپور روڈ، خانیوال روڈ چیچہ وطنی روڈ،بوریوالہ روڈ حاصل پور روڈ، عارفوالہ روڈ،میانچنوں روڈ اور دیگر ضلعی و تحصیل کی رابطہ سڑکیں حکومت پنجاب کے اربوں روپے کے فنڈز سے تباہ کی گئیں اور ان کی کنٹیجنسی کی مد میں بھی کروڑوں روپے فنڈز رکھے گئے لیکن افسران نے مبینہ طور پر فرضی بل بنا کر فنڈز  جون 2020سے قبل ہی نکلوا لئے اور سڑکوں کو بے یارومددگار چھوڑدیا بارشوں اور اوورلوڈنگ کی وجہ سے سڑکیں اپنی معیاد سے پہلے ہی ٹوٹ پھوٹ رہیں ہیں اور کئی سڑکوں میں گڑھے پڑ چکے ہیں جس سے ٹریفک کی روانی بری طرح متاثر ہو رہی ہے حیران کن بات یہ ہے کہ محکمہ ہائی وے کا فیلڈ سٹاف سڑکوں کی دیکھ بھال کی جانب معمولی سی بھی توجہ دینے کیلئے تیار نہیں سڑکوں کے کناروں پر جمع ہونے والا پانی سڑکوں کی تباہی کا باعث بنتا ہے لیکن فیلڈ سٹاف  اور افسران گھروں میں بیٹھ کر تنخواہیں وصول کر رہے ہیں ایکسیئن بھی کئی کئی روز دفتر نہیں ہوتے جس کی وجہ سے تمام محکمانہ امور ٹھپ ہو چکے ہیں اس حوالے سے جب ایکسیئن سے رابطہ کیاگیا تو انہوں نے ملنے سے انکار کر دیا اربوں روپے کی سڑکوں کی بربادی پر شہریوں اور سو ل سوسائٹی سے وابستہ افراد ایم سرور چوہدری،صہیب نجف جعفری،چوہدری جمیل سندھو ایڈووکیٹ، علی عمران ایڈووکیٹ،میاں جہانزیب ایڈووکیٹ، عبدالرشید چوہدری و دیگر نے گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے سیکرٹری مواصلات پنجاب سے محکمہ ہائی وئے کے فنڈز کا خصوصی آڈٹ کرانے اور محکمانہ امور میں غفلت و لاپرواہی پرتنے پر افسران کے خلاف کاروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

فنڈز

مزید :

ملتان صفحہ آخر -