قابلِ رحم ہیں وہ دیوانے

قابلِ رحم ہیں وہ دیوانے
قابلِ رحم ہیں وہ دیوانے

  

قابلِ رحم ہیں وہ دیوانے

جن کو حاصل نہیں ویرانے

ہم ہلاکِ ستم نہیں اے دوست!

ہم کو مارا ہے لطفِ بیجا نے

جن کا عنوان بن گئی وہ نظر

کتنے رنگین ہیں وہ افسانے

میں تو اس زندگی سے رُوٹھا ہوں

آپ کیوں آ رہے ہیں سمجھانے

میری محرومیوں کا غم ہے انہیں

چھلک اٹھیں کہیں نہ پیمانے

کشتۂ اعتماد ہیں ہم لوگ

ہم کو دھوکا دیا ہے دُنیا نے

تلخ گو مخلصوں کی محفل میں

جونؔ کس بات کا برا مانے

شاعر: جون ایلیا

Qabil  e  Rehm Hen Wo Dewaanay

Jin Ko Haasil Nahen Hen Veraanay

Ham Halaak  e  Sitam Nahen Ay Dost

ham Ko Maara Hay Lutf  e  Bejaa Nay

Jin Ka Unwaan Ban Gai Wo Nazar

Kitnay ARangeen Hen Wo Afsaaanay

main To Iss Zindagi Say Rootha Hun

Aap Kiun Aa Rahen Hen Samjhaanay

Meri Mehroomion Ka Gham Hay Unhen

Chalak Uthhen Kahen NA Paimaanay

Kushtaa  e  Aitmaad Hen Ham Log

Ham Ko Dhoka Dia Hay Dunya Nay

Talkh Go Mukhlason Ki Ki Mehfill Men

JAUN Kiss Baat ka Bura Maanay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -