کوئی حالت بھی اب طاری نہیں ہے

کوئی حالت بھی اب طاری نہیں ہے
کوئی حالت بھی اب طاری نہیں ہے

  

کوئی حالت بھی اب طاری نہیں ہے

تو کیا یہ دل کی ناداری نہیں ہے

میں ہوں ایسے سفر پر جانے والا

کہ جس کی کوئی تیاری نہیں ہے

ہوں زد  پر اس طرح تیرِ فنا کی

ابھی جیسے میری باری نہیں ہے

کہوں کیا ، کتنا بے آرام ہوں میں

میری امید ابھی ہاری نہیں ہے

میں اپنے آپ سے ہوں غیر کتنا

کسی سے بھی مِری یاری نہیں ہے

ہوں بے حد تنگ اپنے آپ سے میں

کہ اب تک خود سے بیزاری نہیں ہے

یہ میری زندگی ، میری اذیت

ہے ایسا وار ، جو کاری نہیں ہے

علم اٹھتے تو ہیں اب بھی ہمارے

مگر وہ گریہ و  زاری نہیں ہے

گلہ کر اب بچھڑنے میں ہمارے

میری جان ! کوئی دشواری نہیں ہے

شاعر: جون ایلیا

Koi Haalat Bhi Ab Taari Nahen Hay

To Kia Yeh Dil Ki Nadaari Nahen Hay

main HuN aisay Safar Pe Jaanay waala

Keh Jiss Ki Koi Tayyaari Nahen Hay

Hun Azdd Pe Iss Tarah Teer  e  Fana Ki

Abhi Jaisay  Miri Baari Mahen Hay

Kahun Kia, Kitna Be Aaraam Hun Main

Miri Umeed Abhi Haari Nahen Hay

Main Apnay Aap Say Hun Ghair Kitna

Kisi Say Bhi Miri Yaari Nahen Hay

Hun Behadd Tang Apnay Aap Say Main

Keh Ab Tak Khud Say Mezaari Nahen Hay

Yeh Meri Zindagi, Meri Azyyat

Hay Aisa Waar Jo Kaari Nahen Hay

Alam Uthtay To Hen Ab Bhi Hamaaray

Magar Wo Girya  o  Zaari Nahen Hay

Gila kar Ab Bicharrnay Men Hamaaray

Miri JAan, Koi Dushwaari Nahen Hay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -