لائی تھی شام دل کی عجب لہر میں ہمیں

لائی تھی شام دل کی عجب لہر میں ہمیں
لائی تھی شام دل کی عجب لہر میں ہمیں

  

لائی تھی شام دل کی عجب لہر میں ہمیں

اس چشم نے پلائی مگر زہر میں ہمیں

فتنے اٹھے ہیں ہم سے بہت تیرے شہر میں

آنا نہ چاہیے تھا ترے شہر میں ہمیں

نہلا رہا ہے پرتوِ رنگِ بدن ترا

صبح بہار کی شفقیں نہر میں ہمیں

اب آ     کہ بے گلہ ہی ملیں گے ہم اب تجھے

کوئی بھی غم رہا نہ غم دہر میں ہمیں

ہر سانس اس کا شعلۂ خواہش فروز تھا

کیسا ہوس فزا وہ لگا، قہر میں ہمیں

شاعر: جون ایلیا

Laai Thi Shaam Dil Ki Ajab Lehr Men Hamen

Uss Chashm Nay Pilaaee Magar Zehr Men Hamen

Fitnay Uthay Hen HamSay Bahut Teray Shehr Men

Aana Na Chaahiay Tha Teray Shehr Men Hamen

Nehlaa  Raha Hay Partav  e  Rang  e  Badan Tira

Subh  e  Bahaar Ki Shafqen Nehr Men Hamen

Ab Aa Keh Be Gila Hi Milen gay Ham Ab Tujhay

Koi Bhi Gham Raha Na Gham  e  Dehr Men Hamen

Har Saans Iss Ka Shola  e  Khaahish Faroz Tha

Kaisa Hawas fazaa Wo Laga Qeher Men Hamen

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -