میرے مطلوب و مدعا ،توجا

میرے مطلوب و مدعا ،توجا
میرے مطلوب و مدعا ،توجا

  

میرے مطلوب و مدعا ،توجا

تجھ سے مطلب نہیں ہے جا، توجا

اب شہادت ہوس ہے یاروں کو

ہوش معزول ہو رہا ، تو جا

توُ کسی حال میں بھی ہو اس پل

اگلی پل کا ہے اقتضا تو جا

ہو گیا ہوں میں تیری ذات میں گم

اب میں تیرا نہیں رہا،تو جا

اب تری بات تیری حد میں نہیں

شوق بڑھنے لگا ترا،توجا

جانے میں کب کا آ چکا خود میں

جانے تو کب کا جا چکا،تو جا

ہے مجھے تیری جستجو کرنا

تُو عجب آدمی لگا ،تو جا

ہے تری ذات کیا خیال انگیز،

اب ترا کام کیا رہا ، توجا

شاعر: جون ایلیا

Meray Matloob  o Mudaa, Tu Ja

Tujh Say Matlab Nahen hay Ja , Tu Ja

Ab Shahaadat Hawas Hay Yaaron Ko

Hosh Mazool Ho Raha, Tu Ja

Tu Kisi Haal Men Bhi Ho Iss Pall

Agli Pall Ka Hay Iqtazaa, Tu Ja

Ho Gia Hun Main Tera Zaat Men Gum

Ab Main Tera Nahen Raha, Tu Ja

Ab Teri Baat Teri Hadd Men Nahen

Shoq Barrhanay Laga Tera,Tu Jaa

Jaanay Main Kab Ka Aa Chuka Khud Men

Jaanay Tu Kab Ka Ja Chuka, Tu Ja

Hay Mujhay Teri Justujoo Karna

Tu Ajab Aadmi Laga, Tu  Ja

Hay Tiri Zaat Kia Khayaal Angaiz

Ab Tira Kaam Kia Raha , Tu Ja

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -