ہر گماں جس پہ وار ڈالا ہے

ہر گماں جس پہ وار ڈالا ہے
ہر گماں جس پہ وار ڈالا ہے

  

ہر گماں جس پہ وار ڈالا ہے

اس نے ہی مجھ کو مار ڈالا ہے

نہ اتارا کسی نے جامۂ رنگ

یاں بدن تک اُتار ڈالا ہے

خود تن آساں ہے روشنی کتنی

مجھ پہ کرنوں کا بار ڈالا ہے

دید تو نے نگہ کے دامن میں

یاد رکھنا، غبار ڈالا ہے

میں نے قدموں میں تیرے دامن کش

دامنِ تار تار ڈالا ہے

بات ایسی ہی تھی کہ اب میں نے

بیچ میں خود کو یار ڈالا ہے

ہار کر اس سے اس کی گردن میں

میں نے ہی بڑھ کے ہار ڈالا ہے

اب نہ لڑنا کہ ہم نے دنیا کو

بیچ میں بار بار ڈالا ہے

اپنے آ گے مجھ آبلہ پا نے

خود ہی اک خارزار ڈالا ہے

میرے زخموں نے تیرا موسم رنگ

خود ہو کر گزار ڈالا ہے

ہوں پہنچ پار خود سے اور اسے

اور بھی دور پار ڈالا ہے

شاعر: جون ایلیا

Har Gumaan Jiss Pe Waar Daala hay

Uss Nay Hi Mujh Ko Maar Daala Hay

Na Utaara Kisi Nay Jaama  e  Rang

Yaan Badan Tak Utaar Daala Hay

Khud Tan Asaan hay Roshni Kitni

Mujh Pe Kirnon Ka Baar Daala Hay

Deed Tu Nay Nigah K Daaman Men

Yaad Rakhna , Ghubaar Daala hay

Main NAy Qadmon Men Teray Daaman Kash

Daman  e  taar Taar Daala hay

Baat Aisi Hi Thi Keh Ab Main Nay

Beech Men Khud Ko Yaar Daala hay

Haar kar Uss Say Uss Ki gardan Men

Main Nay Hi Barrh K Haar Daala Hay

Ab Na Larrna Keh Ham nay Dunya Ko

Beech Men Baar Baar Daala hay

Apnay Aagay Mujh Aabla Apaa nay

Khud Hi Ik Khaarzaar Daala Hay

Meray Zakhmon Nay Tera Maosam Rang

Khoon Ho Kaar Guzaar Daaala Hay

Hun Pahunch Paar Khud Say Aor Usay

Aor Bhi Door paar Daala Hay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -